افسانےسائرہ راحیل خانلکھاری

تیرے حصے آ گئی میری جان .. سائرہ راحیل خان

” دیکھ چنی تیرے لئے کیا لایا ہوں”
ہائے میں مر گئی !
تجھے کیسے پتا چلا کے میرا دل کر رہا تھا جلیبیاں کھانے کو؟
بس تیرے دل کی ہر بات جان لیتا ہوں میں!
“اس نے اسکی ہرنی جیسی آنکھوں میں دور تک جھانکتے ہوئے کہا ”
چل جھوٹا! جلیبیاں دے مجھے باتیں نا بنا۔ ۔
” اسکی آنکھوں میں اپنے لیے چاہت کا سمندر امڈتا دیکھ وہ حیا سے نگاہیں چرا گئی اور ندیدے بچوں کی طرح جلیبیاں کھانے لگی”
ایک بات تو بتا بالی !
“وہ ندی میں اپنے پاؤں ڈبوتے ہوئے بولی”
پوچھ!
یہ دنیا والوں کو عشق محبت سے اتنا بیر کیوں ہے، کیا اتنی بری چیز ہے یہ؟
نہیں رے پگلی عشق تو رب کا دوسرا روپ ہے ، جس دل میں رب بستا ہے محبت بھی وہیں ڈیرہ ڈالتی ہے۔ دنیا کا کیا ہے اسے تو ہر اس چیز سے بیر ہوتا ہے جو اسکے پاس نہیں ہوتی اور سب کو نصیب تھوڑا ہوتی ہے محبت، یہ تو میرے سوہنے رب کی دین ہے ، کچھ خاص دل ہی چنے جاتے ہیں اس انمول جذبے کے لیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا یہ بتا ! کتنی گہری ہے میری محبت تیرے دل میں؟
“چنی نے اس سے ایک اور سوال کر ڈالا”
اور خود جواب سے پہلے ہی اسکی آنکھوں میں ڈوبنے لگی۔۔۔۔۔
“جتنا گہرا اس ندی کا پانی ہے، یا شاید اس سے بھی گہری !”
“ندی کنارے پڑے پتھر پانی میں اچھالتے ہوئے بالی کسی گہری سوچ میں کھو کر بولا”
خیال کرنا بالی! کہیں گہرے پانیوں جیسی اپنی محبت میں ڈبو ہی نا دینا مجھے۔۔۔۔۔
“وہ یکدم اداس ہوگئی”
عشق میں تو ڈوبے بغیر کوئی پار لگتا ہی نہیں چنی!
پر تو فکر نا کر، میں خود ڈوب کے تجھے پار لگا دوں گا۔۔۔۔۔
نا جی، پار بھی تیرے سنگ لگوں گی ، جو ڈوبی تو بھی تیرے سنگ!!!!!!
“وہ اسکا ہاتھ اپنے ہاتھ میں لیتے ہوئے محبت کی سرشاری میں کھو گئی۔۔۔۔۔۔
ندی کے آس پاس لہلہاتا سبزہ، درختوں پر چڑیوں کی چہچہاہٹ، اور دور سے آ تی چرخے کی آ واز،،، سب مل کر ان کی لازوال محبت کا گیت گنگنا رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بات سن ! جو کبھی تو مجھ سے دور ہو گئی تو کیسے جی پاؤں گا میں تیرے بغیر چنی؟
“اس نے اسکی موہنی صورت کو حسرت سے تکتے ہوئے اداس ہو کر کہا۔ ”
یہ لے! رکھ سنبھال کے میری نشانی۔۔۔
” بالی کی اداسی محسوس کرتے ہوئے چنی نے اپنی انگلی سے چھلا اتارا اور اسکے ہاتھ پے رکھ دیا”
مگر مجھے صرف چھلا نہیں، چھلے والی بھی چاہیے!
وہ تو سدا سے تیری ہی ہے۔
“اسنے ندی میں بھیگتے اپنے پاؤں لہراتے ہوئے اترا کر کہا ”
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“تیرے میرے پیار دا کوئی ایسا گیت گا دے ،،،،
جیڑا چڑھ جائے زمانے دی زبان ،،
میرے حصے آ یا تیرا چھلا وے محرما ، تیرے حصے آ گئی میری جان۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
سائیں بابا یہی گیت دن بھر گاؤں کی گلیوں میں گاتا پھرتا تھا، اس وقت وہ گنگناتا ہوا ان دونوں کے پاس سے گزرا تو آس پاس کا سارا ماحول چاہت کے رنگوں میں نہا گیا ۔۔۔۔۔
” دیکھو سائیں بابا آج میں نے اس کو اپنا چھلا نشانی دے ہی دیا”
وہ سائیں بابا کی طرف دیکھ کر اونچی آواز میں بولی۔۔۔۔۔۔
“کیا کر رہی ہے کملی ، آہستہ بول کوئی سن لے گا”
تو کیا ہوا سن لے کوئی سنتا ہے تو ، چنی کسی سے ڈرتی ہے بھلا۔۔۔۔۔۔
اچھا جی اتنی تو بہادر !
وہ تو میں ہوں، کوئی شک؟
نا بابا تجھ پہ بھلا کیسا شک۔۔۔
“اس نے اسکی معصومیت پر نثار ہوتے ہوئے پیار سے اسکی طرف دیکھا اور دونوں ایک دوسرے کا ہاتھ پکڑے سائیں بابا کا گیت گنگنانے لگے!!!!
“میرے حصے آ یا تیرا چھلا وے محرما،
تیرے حصے آ گئی میری جاں!!!!!!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


کہاں رہ گئی تھی چنی، تجھے میں نے صبح بتایا بھی تھا کے آج کہیں مت جانا ، گھر پر مہمان آ رہے ہیں۔ چل اب جلدی سے منہ دھو کے کپڑے بدل لے۔۔۔
“چنی کے گھر آ تے ہی اسکی بھابی نے ہدایت جاری کی”
مگر یہ تو بتا دے بھابھی کونسے مہمان آ رہے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“چنی نے نلکے سے ہاتھ منہ دھوتے ہوئے پوچھا”
تیرے بھائی نے ایک بہت اچھے گھر میں تیری بات پکی کر دی ہے، وہ لوگ آج شگن لے کے آ رہے ہیں۔۔۔۔
“بھابی نے کچے صحن میں جھاڑو لگاتے ہوئے اسے بتایا ”
تو ہوش میں ہے بھابھی؟ یہ کیا کہہ رہی ہے؟
“بھابی کی بات سن کر چنی کے پیروں تلے سے جیسے یکدم زمین کھسک گئی، وہ نلکا چھوڑ کر بھابی کیطرف لپکی”
میں بتا رہی ہوں بھابی! میں نے بالی کے سوا کسی سے شادی نہیں کرنی۔ بس تو کہہ دے بھائی کو کے چنی نے انکار کر دیا ہے۔۔۔
تیرا دماغ خراب تو نہیں ہوگیا ۔ دیکھ میں تیری ماں کی جگہ ہوں ، مان لے میری بات ضد مت کر چنی، تجھے پتا ہے وہ کبھی نہیں مانے گا بالی کے لیے۔۔۔
“بھابی نے چنی کو پیار سے سمجھانا چاہا”
تو پھر جا کے بتا دے بھائی کو، وہ اگر بالی کے لیے راضی نہیں ہو گا تو چنی بھی اس شادی کے لیے راضی نہیں ہوگی۔۔۔۔
“چنی نے دو ٹوک الفاظ میں بھابھی کو اپنا فیصلہ سنا دیا”
مگر فیصلہ تو کرنے والا کر چکا تھا۔ چنی کی آ ہ و بکا اور آنسوؤں کا کسی پر کوئی اثر نا ہوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بارات آنے والی ہے جلدی تیار کر اسے، دیکھتا ہوں کیسے نہیں کرے گی یہ شادی ۔ اسکی آج ڈولی اٹھے گی اس گھر سے یا پھر جنازہ !!!!
“چنی کے بھائی نے گرجتی ہوئی آواز میں بیوی سے کہا اور بارات کے انتظار میں گھر سے باہر چلا گیا”
نا بھابھی! بیشک میرا جنازہ اٹھ جانے دے مگر کسی غیر کی ڈولی میں نا بٹھا مجھے۔۔۔۔
بالی کہتا ہے “جس دل میں رب بستا ہے اسی دل میں محبت ڈیرہ ڈالتی ہے،”
سمجھا نا بھائی کو، کیا اسکے دل میں رب نہیں بستا ، کیا اسے اپنی بہن سے محبت نہیں ہے؟ اسے کہہ مت کمائے یہ ظلم۔۔۔۔
تجھے رب کا واسطہ بھابھی، میرے بالی کے پاس جانے دے مجھے، وہ مر جائے گا میرے بغیر !!!!
“چنی بے بسی میں روتی بلکتی اپنی بھابھی کے قدموں میں گر کر فریاد کرنے لگی”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بس کر دے نا مراد! کس بالی سے ملنے جانا چاہتی ہے تو؟ اور نہیں بستا تیرے بھائی کے دل میں رب، کما چکا وہ یہ ظلم تیری محبت سے، ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“بھابھی کے ضبط کا بندھن ٹوٹنے ہی والا تھا مگر اس نے چنی کے دکھ کا خیال کرتے ہوئے خود پر بمشکل قابو پایا ۔ اپنے قدموں میں جھکی چنی کو بازوؤں میں بھر کر سینے سے لگا لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا کر دیا بھائی نے، بول نا بھابی کیا ظلم کمایا اس نے؟
“بھابی کی ادھوری باتوں سے چنی کا دل ڈوبنے لگا”
کچھ نہیں چنی، بس تو میری بات مان اور ضد چھوڑ دے۔
کوئی مول نہیں تیرے ان آنسوؤں کا۔ نصیب سے بھی بھلا کوئی لڑ پایا ہے آج تک۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“بھابھی نے چنی سے ایک بار پھر التجا کی تو چنی بلکل خاموش ہو گئی۔ جانتی تھی کے بھابھی بھی اسکی طرح بے بس ہے”
اب کی بار آنسو صرف بھابھی کی آنکھوں سے رواں تھے ۔ چنی جیسے پتھر کی ہو گئی ۔۔۔۔۔…………………………
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھابھی نے چنی کو سرخ رنگ کا کفن پہنایا اور تیار کر کے کھڑکی کے پاس پلنگ پر بٹھا دیا۔۔۔۔
چنی ویران آنکھوں سے کھڑکی کے باہر تاروں بھرے آسمان کو تکنے لگی۔ ۔۔۔۔
“نور وے شدایا کادا ہو گیا تو دور وے۔۔۔۔۔۔
تاریاں توں پار تینوں ملوں گی ضرور وے۔۔۔۔۔
اک دن ڈھل جانی زندگی دی رات وے،
مٹی دیاں مورتاں دی مٹی ہے اوقات وے۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
سائیں بابا کے کے گیت کے چند اشعار چنی کی منجمد ہوئی دھڑکنوں اور آنسوؤں کو پگھلانے لگے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بارات آ گئی ہے چنی!!!!
بس اسی کو اپنا مقدر سمجھ کے صبر کا گھونٹ پی جا میری بچی!
“بھابی نے چنی کا ماتھا چومتے ہوئے کہا۔ اس نے چنی کو ماں بن کر پالا تھا اس لیے اسکا دل چنی کی حالت پر پسیج کر رہ گیا مگر چنی کی طرح وہ بھی بے بس تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“دیکھ بالی، کاش کے اس روپ میں ایک بار دیکھ لیتا تو اپنی چنی کو تو صرف چھلا ہی نہیں بلکہ چھلے والی بھی ساتھ لے جاتا۔ ڈبو دیا نا تو نے چنی کو اپنی گہرے پانیوں جیسی محبت میں!!!!!!!!!!!!!
“چنی نے آئینے میں اپنا عکس دیکھتے ہوئے بالی سے شکوہ کیا” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھابھی اور چند سکھیاں جب چنی کو ڈولی میں بٹھانے کے لیے لائیں تو چنی کا بھائی سر پر اونچا شملہ سجائے اسکی ڈولی کو کاندھا دینے کے لیے تیار کھڑا تھا۔ ۔۔
“لے بھائی! کر لے آج تو اپنی دونوں خواہشیں ایک ساتھ پوری۔ اٹھا چل بہن کا جنازہ اس کی ڈولی کی صورت ۔۔۔۔۔
“چنی نے بھائی کی طرف دیکھتے ہوئے خاموش نگاہوں سے شکوہ کیا ۔اور زندہ لاش کی طرح ڈولی میں بٹھا دی گئی۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شہنائی اور الغوزے کے ملاپ سے فضا میں ابھرنے والے اداس سر ۔۔ہوٹر کی چینختی ہوئی آواز میں دب کر رہ گئے ۔۔۔بھائی نے ابھی ڈولی کہاروں کے حوالے کی ہی تھی کہ سرکاری جیپ سے دھڑام کر کے زمین پر قدم جماتے ہوئے ہاتھ میں پستول تانے تھانیدار کی کڑک دار آواز نے لوگوں کو اپنی طرف متوجہ کر لیا۔۔۔۔خبردار بھاگنے کی۔کوششش نہ کرنا۔۔۔ہم نے بالی کی لاش کے ٹکڑے اور آلہ قتل دونوں برآمد کر لئے ہیں۔۔۔۔
چنی کے منہ سے ایک دردناک چینخ نکلی جو بھائی کی بلند اواز میں دب کر رہ گئی ۔۔۔۔جو بڑے فخر سے اعلان کر تے ہوئے کہہ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں۔۔۔تھانیدارا۔۔میں ماریا ہے۔۔۔بالی نوں۔۔۔بس۔۔بہن نوں ٹور لیندے۔۔۔فیر۔۔چلتا ہوں۔۔۔تھانے۔۔۔۔
چند ہی لمحوں بعد کہاروں کے کاندھوں پر دھری چنی کی ڈولی ایک طرف اور سرکاری جیپ چنی کے بھائی کو لئے دوسری طرف چل پڑی۔۔۔چنی کی ماں جیسی بھابھی کی مضطرب نگاہیں کبھی دھیرے دھیرے دور ہوتی ہوئی چنی کی ڈولی اور کبھی کچے راستے پر دوڑتی۔۔۔نظروں سے اوجھل ہوتی سرکاری جیپ کا تعاقب کر رہی تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈولی جب گاؤں کے بیچ ندی کنارے سے گزری تو چنی کی بارات میں شہنائی کی جگہ سائیں بابا کا گیت گونجنے لگا۔۔۔۔۔۔۔
“رب دے بھانیاں دی ایسی چڑھی لور وے ،،،
کرماں تے لیکھاں اگے چلیا نا زور وے،،،
مونڈھیاں تے چک ڈولی ، ٹر پئے کوہار مینوں،،
کھیڑیاں دے پنڈ لے کے جان ،
میرے حصے آیا تیرا چھلا وے محرما!
“تیرے حصے آ گئی میری جان”

فیس بک کمینٹ

متعلقہ تحریریں

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker