اہم خبریںکھیل

کراچی ٹیسٹ:آسٹریلیا کے 556 رنز کے جواب میں پاکستانی ٹیم فالو آن کا شکار

کراچی:کراچی میں دوسرے ٹیسٹ کی پہلی اننگز میں آسٹریلیا کے 556 رنز کے جواب میں پاکستان کرکٹ ٹیم مشکلات کا شکار ہے، تیسرے دن چائے کے وقفے تک پاکستان کے 7 کھلاڑی صرف 100 رنز پر پویلین لوٹ چکے تھے۔
کھیل کے تیسرے دن آسٹریلیا نے 9 وکٹوں کے نقصان پر 556 رنز بنانے کے بعد اننگز ڈیکلیئر کرنےکا اعلان کیا، جس کے بعد پاکستان نے اپنی اننگز شروع کی تو ابتدا ہی میں اس کے دونوں اوپنر جلد پویلین لوٹ گئے۔
پاکستانی اوپنر اور راولپنڈی ٹیسٹ کی دوسری اننگز میں سینچری بنانے والے عبداللہ شفیق 13 رنز بنا کر آؤٹ ہوگئے۔
راولپنڈی ٹیسٹ کی دونوں اننگز میں سینچریاں بنانے والے امام الحق کو بھی 20 رنز پر اسپنر نیتھن لیون نے آؤٹ کردیا۔
دونوں اوپنرز کے آؤٹ ہونے کے بعد جب کپتان بابر اعظم اور اظہر علی نے بیٹنگ لائن اپ کو مستحکم کرنے کے لیے باگ ڈور سنبھالی اس وقت پاکستان کو فالو آن سے بچنے کے لیے مزید 319 رنز درکار تھے۔
لیکن پہلے ٹیسٹ میں شاندار سینچری بنانے والے تجربہ کار بلے اظہر علی بھی وکٹ پر زیادہ دیر نہیں ٹھہرسکے اور صرف 14 رنز بنا کر مچل اسٹارک کا شکار بن گئے۔
اظہر علی کے بعد فواد عالم بیٹنگ کے لیے آئے لیکن پہلی ہی بال پر مچل اسٹارک کی ایک خطرناک یارکر ڈلیوری کا نشانہ بن گئے۔
فواد عالم کے بعد آؤٹ ہونے والے کھلاڑی وکٹ کیپر بیٹر محمد رضوان تھے، انہوں نے6 رنز بنائے، انہیں پیٹ کمنز نے نشانہ بنایا۔
محمد رضوان کے بعد فہیم اشرف 4 جبکہ ساجد خان 5 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے۔
تیسرے دن جب میچ کے دوران چائے کا وقفہ ہوا اس وقت تک پاکستان نے 7 وکٹوں کے نقصان پر 100 رنز بنائے تھے اور کپتان بابر اعظم 29 رنز کے ساتھ ناٹ آؤٹ تھے جبکہ ان کے ساتھ کریز پر حسن علی موجود تھے۔
چائے کے وقفے کے بعد حسن علی بغیر کوئی رن بنائے رن آؤٹ ہوئے جبکہ بابر اعظم 33 رنز کے ساتھ کریز پر موجود ہیں اور ان کے ساتھ نعمان علی بیٹنگ کر رہے ہیں۔
اس سے قبل آسٹریلیا نے گزشتہ روز کھیل کے اختتام تک 8 وکٹوں پر 505 رنز بنائے تھے، آج جب کھیل شروع تو مچل اسٹارک گزشتہ روز کے اسکور 28 رنز میں مزید کوئی اضافہ کیے بغیر آؤٹ ہوگئے لیکن اس کے بعد اننگز ڈیکلیئر کرنے قبل کپتان پیٹ کنمز کے 34 رنز ناٹ آؤٹ کی بدولت آسٹریلیا نے تیز رفتار 51 ر نز بنائے اور 556 رنز کے پہاڑ جیسا اسکور بورڈ پر سجادیا۔
پاکستان کو میدان میں 189 اوورز تک مشقت کرنے پر مجبور کیا گیا جس میں سات باؤلرز کا استعمال کیا گیا، آل راؤنڈر فہیم اشرف نے 21 اوورز میں 2-55 کے ساتھ حملے کا انتخاب کیا جبکہ آف اسپنر ساجد خان نے 57 اوورز میں 167-2-2 لیے۔
پاکستان کے خلاف دوسرے ٹیسٹ میچ کے ابتدائی دونوں دن کا کھیل آسٹریلیا کے نام رہا تھا، عثمان خواجہ کی شاندار 160 رنز کی اننگز کی بدولت مہمان ٹیم نے دوسرے روز کے کھیل کے اختتام تک 8 وکٹوں کے نقصان پر 505 رنز بنائے تھے۔
کراچی کے نیشنل اسٹیڈیم میں کھیلے جا رہے سیریز کے دوسرے ٹیسٹ میچ میں آسٹریلیا کے کپتان پیٹ کمنز نے ٹاس جیت کر بیٹنگ کا فیصلہ کیا تھا۔
اس سے قبل ٹاس کے موقع پر آسٹریلیا کے کپتان پیٹ کمنز نے کہا تھا کہ یہ ایک اچھی وکٹ لگ رہی ہے اور ہم بڑا اسکور کرنے کی کوشش کریں گے، ہم نے اپنی ٹیم میں مچل سویپسن کو شامل کیا ہے۔
پاکستان کے کپتان بابراعظم نے کہا تھا کہ یہ کراچی کی روایتی وکٹ ہے جس پر بعد میں اسپنرز کو مدد ملے گی۔ میچ کے لیے پاکستانی ٹیم میں دو تبدیلیاں کی گئی تھیں اور افتخار احمد اور نسیم شاہ کی جگہ فہیم اشرف اور حسن علی کو فائنل الیون کا حصہ بنایا گیا تھا۔
واضح رہے کہ دونوں ٹیموں کے درمیان راولپنڈی میں کھیلا گیا سیریز کا پہلا ٹیسٹ میچ ڈرا ہوا تھا۔
آسٹریلیا 1998 کے بعد پاکستان کا پہلا دورہ کر رہا ہے، اس سے قبل اس نے سیکیورٹی وجوہات کی بنا پر دورہ کرنے سے انکار کر دیا تھا۔
(بشکریہ: ڈان نیوز)

فیس بک کمینٹ

متعلقہ تحریریں

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker