شاعریلکھاریماہ طلعت زاہدی

اور میں خُود ہی اپنا ہوں مقصود .. ڈاکٹر مقصود زاہدی

غیر مطبوعہ نظم

رہنما ہر قدم پہ ہیں موجود
راہرو اِک سِرے سے ہیں مفقُود
منزلوں کا کوئی ُشمار نہیں
راستے ہر طرف کے ہیں مسدود
لَب پہ ہر شخص کے خُدا کا ہے نام
ہے ہر اِک ہونٹ پہ صلٰوتہ و درُود
پھر بھی خوفِ خدا کا نام نہیں
گویا کوئی خدا نہیں موجود
دردِ ملّت ہے ایک عنقٰے شے
ہے ہر اِک کو عزیز اپنا وجود
کس طرح ہاتھ آئی آزادی
جو کرے فِکر اِس کی وہ مردود
تھا اسی چہ کُنم کے عاَلم میں
مُجھ سے پُوچھی کسی نے وجِہ ورود

کہا میں نے کہ اِک مُسافر ہوں
اور میں خُود ہی اپنا ہوں مقصود

(مرسلہ : ماہ طلعت زاہدی)

فیس بک کمینٹ
Tags

متعلقہ تحریریں

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker