سرائیکی وسیب

زکریا یونیورسٹی میں من مانیاں ، گورنر کے حکم پر برطرف ہونے والا افسر ازسر نو تعینات

ملتان : ( خصوصی رپورٹ )جنوبی پنجاب کی سب سے بڑی درسگاہ زکریا یونیورسٹی میں میرٹ کی بالادستی کے دعوے ایک بار پھر غلط ثابت ہوگئے۔ اور من مانی تقرریاں جاری ہیں ۔تفصیل کے مطابق گورنرپنجاب چوہدری محمد سرور نےڈپٹی رجسٹرار طاہر محمود ماہڑا کو میرٹ کے خلا ف تقرری پر بر طرف کیا لیکن وائس چانسلر نے جن کاتعلق صوبہ خیبر پختونخوا کے شہر ڈیرہ اسمعیل خان سے ہے انہوں نے ڈیرہ اسمعیل خان کے ہی ایک معروف بزنس مین کے کہنے پر طاہر محمود کو انتہائی اہم پوزیشن پر نائب خزانہ دار تعینات کردیا۔مروت فیملی سے تعلق رکھنے والے ڈیرہ غازی خان کے یہ بزنس مین طاہر محمود ماہڑا کے سسر اور وائس چانسلر ڈاکٹر منصور اکبر کنڈی کے قریبی دوست بتائے جاتے ہیں۔طاہر محمود ماہڑہ نے گورنر کی طرف سے برطرف کئے جانے کو عدالت میں چیلنج کر رکھا ہے اور اس مقدمے کی پیروی میں یونیورسٹی انتظامیہ مبینہ طور پر نرمی برت رہی ہے۔
دریں اثناء چند روز پہلے یونیورسٹی میں پی ایس ایف اور پشتون طلبا کے درمیان ایک جھڑپ ہوئی جس میں ایک پشتون طالب علم زاہد خان زخمی ہوا اور پشتون طلبا نے پی ایس ایف کے ایک طالب علم کی گاڑی مکمل طور پر توڑ پھوڑ دی اور کئی گھنٹے تک یونیورسٹی کو یرغمال بنائے رکھا۔ وائس چانسلر نے اس جھگڑے کی آزادانہ انکوائری کی بجائے یونیورسٹی کے اہم ترین انتظامی افسر ریذیڈنٹ آفیسر کو ہی بدل دیا۔ وائس چانسلر منصور اکبر کنڈی کو یونیورسٹی کے ملازم بیسیوں ڈرائیورز میں سے کوئی ڈرائیور پسند نہیں آیا اور انہوں نے ڈیرہ اسمعیل خان سے بلال خان نامی ایک شخص کو بلوا کر ڈیلی ویجز پر اپنا ذاتی ڈرائیور تعینات کر دیا ہے جس کو کوئی جواز موجود نہیں تھا۔

فیس بک کمینٹ
Tags

متعلقہ تحریریں

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker