اہم خبریں

تاجروں نے بازار اور مولویوں نے مساجد کھولنے کا اعلان کردیا

کراچی: پاکستان میں تاجروں نے بازار اور مولویوں نے مساجد کھولنے کا اعلان کردیا۔کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے چیئرمین سندھ تاجر اتحاد جمیل پراچہ نے کہا کہ 28 دن سے کراچی بند ہے اور لوگ سسک رہے ہیں، کراچی سے کشمور تک کا تاجر بدحال ہوچکا ہے، چھوٹے تاجر اوران کے ملازم فاقہ کشی پر مجبور ہوچکے ہیں۔
جمیل پراچہ نے کہا کہ لاکھوں ملازمین کو ایک ماہ کی بمشکل تنخواہیں ادا کی ہیں، کل سے تمام حفاظتی انتظامات کےساتھ دکانیں کھول دیں گے۔انہوں نے کہا کہ دوسرا آپشن یہ ہےکہ ہم اہل خانہ کے ساتھ وزیراعلیٰ ہاؤس پہنچ جائیں اور دکانوں کی چابیاں وزیراعلیٰ ہاؤس میں جمع کرادیں، وزیراعلیٰ اور گورنرسندھ نےکوئی رابطہ نہیں کیا لہٰذا تمام تر صورتحال کے ذمہ دار وزیراعلیٰ اورگورنرہاؤس ہیں۔تاجر رہنما رضوان عرفان نے کہا کہ اب مزید لاک ڈاؤن برداشت نہیں کرسکتے، کل سے ہم اپنا کاروبار کھول لیں گے اور ہم حفاظتی اقدامات کے ساتھ کاروبار کھول لیں گے۔دوسری جانب بلوچستان کی تاجر برادری نے بھی کا کل سےکاروباری سرگرمیاں شروع کرنےکااعلان کردیا ہے۔ترجمان انجمن تاجران کا کہنا ہے کہ بلوچستان کی تاجربرادری مزید لاک ڈاؤن کی متحمل نہیں ہوسکتی،تاجرکورونا سے متعلق احتیاطی تدابیر اختیارکرتے ہوئے مارکیٹیں اوربازارکھولیں گے۔بلوچستان کے تاجروں کا کہنا ہے کہ کاروبارکھولنےکےحوالے سے ہم نے حکومتی نمائندوں کو آگاہ بھی کردیا ہے۔ادھر خیبرپختونخوا میں بھی تاجر برداری نے 15 اپریل سے کاروبار کھولنے کا اعلان کیا ہے۔یونائیٹیڈ بزنس گروپ کے سربراہ الیاس بلور نے جیو نیوز سے گفتگو میں کہا کہ لاک ڈاؤن کے باعث چھوٹے تاجر فاقہ کشی پر مجبور ہوگئے ہیں، رمضان المبارک سے قبل لوگ خریداری کرتے ہیں،تجارتی مراکز بند ہونے سے مزدور طبقہ بھی بری طرح متاثر ہے۔
دوسری جانب لاہور میں آل پاکستان انجمن تاجران کے وفد نے وزیر صنعت پنجاب اسلم اقبال سے ملاقات کی۔’حکومت محدود وقت کیلئے کاروبار کھولنے کی اجازت دے’تاجروں نے مطالبہ کیا کہ حکومت محدود وقت کے لیے کاروبار کھولنے کی اجازت دے اور کورونا وائرس کے انسداد کے لیے ایس او پیز تیارکرے، ہم عملدرآمد کرنے پر تیار ہیں۔تاجر رہنما نعیم میر کا کہنا تھا کہ حکومتی ملکیت دکانوں کا کرایہ معاف کرکے مثال قائم کی جائے،محکمہ اوقاف، ریلوے اور لوکل گورنمنٹ کی دکانوں کے کرائے معاف کیے جائیں۔
دوسری جانب پریس کانفرنس کے دوران چیئرمین رویت ہلال کمیٹی مفتی منیب الرحمان کا کہنا تھا کہ آج سے مساجد پر لاک ڈاؤن کا اطلاق نہیں ہوگا اور مساجد میں سماجی فاصلے کے اصول کا خیال رکھا جائے گا۔انہوں نے مزید کہا کہ رمضان المباک کے دوران مساجد میں نماز تراویح اور اعتکاف کا سلسلہ جاری رہے گا۔ان کا کہنا ہے کہ برطانوی حکومت نے شہریوں کو سہولیات فراہم کیں، اگر حکومت نے اقدامات نہ اٹھائے تو عوام کا اعتماد کھو دے گی،ریاست کی ذمہ داری ہے کہ باشندوں کو مشکل سے نجات دلائے۔
خیال رہے کہ ملک بھر میں کورونا کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے لاک ڈاؤن کیا گیا ہے جس میں وفاقی حکومت کی جانب سے آج مزید 2 ہفتوں کے لیے توسیع کردی گئی ہے۔اس سے قبل لاک ڈاؤن کی آخری تاریخ 14 اپریل تھی جس میں اب 30 اپریل تک کی توسیع کردی گئی ہے۔

فیس بک کمینٹ

متعلقہ تحریریں

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker