اہم خبریںسرائیکی وسیب

قندیل بلوچ قتل کیس :مفتی قوی کی ضمانت منسوخ ، کمرہ عدالت سے فرار

ملتان : سیشن عدالت نے قندیل بلوچ قتل کیس میں نامزد ملزم مفتی عبدالقوی کی عبوری ضمانت میں توسیع کی درخواست خارج کردی، جبکہ مفتی قوی احاطہ عدالت سے فرار ہوگئے۔یاد رہے کہ گذشتہ ہفتے قندیل بلوچ کے کیس میں نامزد ملزم مفتی عبدالقوی کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کیے گئے تھے، تاہم انہوں نے 17 اکتوبر تک ایک لاکھ روپے کے مچلکوں کے عوض ضمانت قبل از گرفتاری حاصل کرلی تھی۔گذشتہ روز مفتی عبدالقوی پہلی مرتبہ سیشن جج چوہدری امیر احمد خان کی عدالت میں پیش ہوئے، جہاں ان کے وکیل نے دلائل کے لیے وقت طلب کیا، جس کے بعد سماعت آج (18 اکتوبر) تک کے لیے ملتوی کردی گئی تھی۔آج جب سماعت کا آغاز ہوا تو سیشن جج چوہدری امیر احمد خان نے مفتی عبدالقوی کی عبوری ضمانت میں توسیع کی درخواست خارج کردی.اس سے قبل عدالت نے چند منٹ کے لیے درخواست ضمانت پر فیصلہ محفوظ کیا تھا اور اسی دوران وکلاء نے مفتی عبدالقوی کو عدالت سے فرار کروا دیا اور اس طرح خلافِ روایت وہ میڈیا سے بات کیے بغیر عدالت سے چلے گئے۔دوسری جانب سیشن جج نے تفتیشی افسر کو مفتی عبدالقوی کو گرفتار کرنے اور قندیل بلوچ قتل کیس کا چالان جلد عدالت میں پیش کرنے کا حکم دے دیا۔تفتیشی افسر نور اکبر کا کہنا تھا کہ عدالتی حکم کے مطابق مفتی عبدالقوی کو گرفتاری کرکے عدالت میں پیش کریں گے۔یاد رہے کہ فیس بک ویڈیوز سے شہرت حاصل کرنے والی ماڈل قندیل بلوچ کو ان کے بھائی نے گذشتہ برس 15 جولائی کو مبینہ طور پر غیرت کے نام پر قتل کردیا تھا، جس کے بعد پولیس نے ماڈل کے بھائی وسیم کو مرکزی ملزم قرار دے کر گرفتار کیا تھا اور بعدازاں ان کے کزن حق نواز نے بھی گرفتاری دے دی تھی۔دوسری جانب فیس بک اسٹار قندیل بلوچ کے ساتھ متنازع سیلفیز کو جواز بناکر ان کے والد عظیم کی درخواست پر رویت ہلال کمیٹی کے سابق رکن مفتی عبدالقوی کو بھی ضابطہ فوجداری کی دفعہ 109 کے تحت اعانت جرم کے الزام میں مقدمے میں نامزد کیا گیا تھا۔

1

فیس بک کمینٹ

متعلقہ تحریریں

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker