اختصارئےلکھاریماہ طلعت زاہدی

معصوم نے کیا جذباتی اِستحصال .. ماہ طلعت زاہدی

میرے ہونے سے پیشتر امی، پاپا دو بچوں کو کھو چکے تھے، ساڑھے تین سال کی بچی اور ڈیڑھ سال کا بچہ ایک مہینے میں ڈِپتھیریا(خناق) کی نذر ہو گئے تھے۔ تب ڈِپتھیریا کی ویکسین نہیں ایجاد ہوئی تھی۔ بھائی جان اکیلے رہ گئے تھے، جب میں دنیا میں آئی، ان میں اور مجھ میں آٹھ سال کا فرق تھا۔ اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ میرے والدین کا کیا حال ہوگا۔۔ پاپا تو مرد ہونے کے ناطے ضبط کرتے ہوں گے، امی کا حال جدا تھا۔ میں نے ہوش کی آنکھیں کھول کر اُنہیں روتا ہی پایا۔ لیکن دونوں نے ہماری تربیت میں کمی نہ آنے دی، ایک دن میری کسی خطا پر امی نے مجھے کمرے میں بند کردیا۔ مجھے وہ ڈر اور اندھیرا جو چند لمحوں کا تھا، آج بھی یاد ہے، میں سبکیوں کے ساتھ رو رہی تھی جیسے ہی امی نے دروازہ کھولا، میرے معصوم ذہن نے فوراً ایک منصوبے کے تحت ان سے کہا :امی آپ کے دو ہی تو بچے ہیں، پھر بھی آپ ہمیں مارتی ہیں؟ امی نے مجھے تڑپ کر سینے سے لگا لیا،ایک معصوم بچے کا تیر سیدھا ماں کے دل میں لگا تھا، مجھے آج تک ان کے سینے سے لگے ہونےکی گرمی اور اپنی دلیل کی کامیابی کی خوشی نہیں بھولتی۔

فیس بک کمینٹ
Tags

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker