شاعریلکھاری

اک سُرخ غزل سُنیئے ،بعنوانِ شکاگو ۔۔ ڈاکٹر بیدل حیدری

اک سُرخ غزل سُنیئے ،بعنوانِ شکاگو ۔۔ ڈاکٹر بیدل حیدری

 

اک سُرخ غزل سُنیئے ،بعنوانِ شکاگو
کرنا ہے مجھے ذکرِ شہیدانِ ِشکاگو

مزدور کا ذہن اتنا مُسلح نہ تھا پہلے
پائیندہ وتابندہ ،دبستان ِ شکاگو

دونوں مِری نظروں میں ہیں مٹی کی فصلیں
یہ قلعہ ِلاہور ، یہ زندان ِشکاگو

مزدور کی آواز کبھی دَب نہیں سکتی
چُھپ سکتا نہیں خونِ شہیدان ِشکاگو

بیدل مِرے آنگن میں کہاں دھوپ اُترتی
ہوتا نہ اگر چاک ،گریبان ِشکاگو

*** ڈاکٹر بیدل حیدری

فیس بک کمینٹ
Tags

متعلقہ تحریریں

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker