اہم خبریں

سنتھیارچی کی ملک بدر ی کے احکامات پر عملدرآمد روک دیا گیا

اسلام آباد : اسلام آباد ہائی کورٹ نے پیر کو امریکی شہری اور بلاگر سنتھیا ڈی رچی کو فوری ملک بدر کرنے سے متعلق وزارت داخلہ کے فیصلے پر عمل درآمد روک دیا ہے۔
عدالت نے معاملے پر سیکریٹری وزارت داخلہ، وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) اور دیگر فریقین کو نوٹس جاری کیے ہیں اور اُنھیں جواب جمع کروانے کا حکم دیا ہے۔واضح رہے کہ وزارت داخلہ نے چند روز قبل سنتھیا کے ویزے کی مدت میں توسیع کی درخواست مسترد کرتے ہوئے انھیں 15 روز میں پاکستان چھوڑنے کا حکم دیا تھا۔چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہا کہ سنتھیا رچی کی درخواست میں ان کی گراؤنڈ یہ بنتی ہے کہ مقدمات ماتحت عدالتوں میں زیر سماعت ہیں۔
اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے پیر کو سنتھیا کی جانب سے دائر کردہ اس درخواست پر ابتدائی سماعت کی۔عدالت نے اپنے فیصلے میں وزارت داخلہ کے اس فیصلے کے خلاف تمام الزامات کے حوالے سے تحریری طور پر آگاہ کرنے اور بیان حلفی بھی جمع کرانے کا حکم دیا ہے۔
سنتھیا رچی نے اپنی درخواست میں کہا کہ وزارت داخلہ نے ہائی کورٹ میں تحریری جواب جمع کروایا ہوا ہے جس میں اس بات کا ذکر کیا گیا ہے کہ درخواست گزار ’ریاست مخالف یا غیر قانونی سرگرمیوں میں ملوث نہیں ہے۔‘
اُنھوں نے کہا کہ اس کے باوجود ویزے کی مدت میں توسیع کے لیے متعلقہ دستاویزات فراہم کرنے کے بعد بھی ان کے ویزے میں توسیع کی درخواست مسترد کر دی گئی۔درخواست گزار کے وکیل نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ ان کی موکلہ نے اسلام آباد کی مختلف عدالتوں میں درخواستیں دے رکھی ہیں۔ اس کے علاوہ ان کی موکلہ کے خلاف بھی مختلف عدالتوں میں مقدمات چل رہے ہیں۔
اُنھوں نے کہا کہ سنتھیا کے ویزے کی مدت میں توسیع نہ کرنے کے فیصلے سے عالمی سطح پر تاثر جائے گا کہ وزارت داخلہ ’جان بوجھ کر انھیں ان مقدمات کی پیروی سے روک رہی ہے۔‘اُنھوں نے کہا ویزے میں توسیع کی درخواست کو مسترد کرتے ہوئے نہ تو وجوہات کا ذکر کیا گیا اور نہ ہی ان کی موکلہ کو سُنا گیا۔
چیف جسٹس اطہر من اللہ نے اس موقع پر ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ ’ویزہ مسترد کرنے میں وجوہات کا ذکر کرنا ضروری نہیں۔ اُنھوں نے کہا کہ ہر روز پاکستانیوں کے ویزے مسترد ہوتے ہیں لیکن کوئی وجہ نہیں بتائی جاتی۔‘
اُنھوں نے درخواست گزار کے وکیل کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اس درخواست میں ان کی گراؤنڈ یہ بنتی ہے کہ کیسز ماتحت عدالتوں میں زیر سماعت ہیں۔
عدالت نے سنتھیا رچی پر الزمات کے حوالے سے تحریری طور پر آگاہ کرنے اور بیان حلفی جمع کرانے کا حکم دیا اور کہا ہم یقینی بنائیں گے کہ درخواست گزار کو مکمل انصاف ملے۔
( بشکریہ : بی بی سی اردو )

فیس بک کمینٹ
Tags

متعلقہ تحریریں

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker