اہم خبریں

جسٹس فائز عیسیٰ کیس : بینچ تحلیل کرنے سے متعلق حکم نامہ واپس لے لیا گیا

اسلام آباد : سپریم کورٹ نے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے خلاف صدارتی ریفرنس ختم کرنے سے متعلق درخواستوں کی سماعت کرنے والے 10 رکنی بینچ کو تحلیل کرنے کا فیصلہ واپس لیتے ہوئے بینچ برقرار رکھنے سے متعلق نیا تحریری حکمنامہ جاری کردیا ہے۔



تحریری حکمنامے میں کہا گیا ہے کہ عدالت کو بتایا گیا ہے کہ جسٹس مظہر عالم میاں خیل کے قریبی عزیز کے انتقال کی وجہ سے وہ چھٹی پر ہیں اور اب وہ اگلے ہفتے سے دستیاب ہوں گے اس لیے اب اس کیس کی سماعت 28 اکتوبر کو ہو گی۔



بی بی سی کے مطابق ان درخواستوں کی سماعت کرنے والے بینچ کے سربراہ جسٹس عمر عطا بندیال نے یہ اعلان پیر کو ان درخواستوں کی سماعت کے دوران کیا تھا۔اُنھوں نے دوران سماعت کہا کہ اس بینچ کے رکن جسٹس مظہر عالم میاں خیل نے اس بینچ میں شمولیت سے معذوری ظاہر کی ہے۔



درخواست گزار جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے وکیل منیر اے ملک کا کہنا تھا کہ ان درخواستوں کی سماعت کے لیے فل کورٹ بینچ ہی تشکیل دیا جائے جس پر بینچ کے سربراہ کا کہنا تھا کہ نئے بینچ کی تشکیل کا اختیار چیف جسٹس کے پاس ہے۔یہ دوسری مرتبہ تھا کہ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے خلاف صدارتی ریفرنس ختم کرنے سے متعلق دائر درخواستوں کی سماعت کرنے والے بینچ کو تحلیل کرنے کا حکم دیا گیا تھا جو اب واپس لے لیا گیا ہے۔



اس سے پہلے چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ان درخواستوں کی سماعت کے لیے سات رکنی بینچ تشکیل دیا تھا تاہم درخواست گزار جسٹس قاضی فائز عیسیٰ اور دیگر درخواست گزاروں نے اس سات رکنی بینچ میں شامل دو جج صاحبان جسٹس طارق مسعود اور جسٹس اعجاز الاحسن پر اعتراضات اُٹھائے گئے تھے جس کے بعد یہ بینچ تحلیل کر دیا گیا تھا۔جب پیر کو بینچ تحلیل کرنے سے متعلق اعلان کیا گیا تو جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے وکیل منیر اے ملک کا کہنا تھا کہ جب اس بینچ پر کسی نے اعتراض نہیں کیا تو پھر اس کو تحلیل کیوں کیا گیا۔ اُنھوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کے فل کورٹ بینچ کا فیصلہ موجود ہے کہ وہی بینچ درخواستوں کی سماعت کرے گا جس نے ان درخواستوں کی سماعت کا آغاز کیا تھا۔



پاکستان بار کونسل کے وائس چیئرمین امجد شاہ کا کہنا تھا کہ اس بینچ کو بغیر کوئی وجہ بتائے تحلیل کیا گیا ہے اور اگر کوئی نیا بینچ تشکیل دیا گیا تو پاکستان بار کونسل کو اس پر اعتراض ہوگا۔اُنھوں نے کہا کہ اس بینچ میں شامل جج صاحبان نے ان درخواستوں کی تین سماعتیں کی ہیں اور سپریم کورٹ کا حکم بھی ہے کہ اگر ایک بینچ میں شامل ججز نے کچھ سماعتیں کی ہیں تو وہی بینچ درخواستوں کی سماعت بھی کرے۔



اُنھوں نے کہا تھا کہ ’اگر ایک جج نہیں ہے تو اس کا انتظار کیا جاسکتا ہے، جلدی کس بات کی ہے؟‘وکیل رہنما علی احمد کرد کا کہنا تھا کہ ایسا محسوس ہوتا ہے کہ ’کسی کی ریٹائرمنٹ سے پہلے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے خلاف صدارتی ریفرنس کا فیصلہ سنایا جانا ضروری سمجھا جا رہا ہے‘۔بینچ تحلیل کرنے کے اعلان کے بعد بینچ کے سربراہ نے یہ معاملہ چیف جسٹس کو بھجوا دیا تھا کہ ان درخواستوں کی سماعت کے لیے نیا بینچ تشکیل دیا جائے۔
( بشکریہ : بی بی سی اردو )

فیس بک کمینٹ
Tags

متعلقہ تحریریں

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker