اختصارئےزعیم ارشدلکھاری

زعیم ارشدکا اختصاریہ :ونی۔ ۔ جبر کی داستان ِ مسلسل

گذشتہ دنوں خبر تھی کہ دو نوعمر بچیوں کو جرگہ کے حکم پر لاڑکانہ میں ونی کردیا گیا۔ جن کی عمریں بالترتیب چار سال اور دس سال ہیں، ان دونوں مظلوم بچیوں پر یہ قہر بھی ڈھایا گیا کہ وہ زندگی بھر اپنے والدین سے نہیں ملیں گی۔ یہ خبر اتنے غیر اہم اور غیر موثر انداز میں نشر کی گئیں گویا ونی ہونے والی بچیاں انسان ہی نہ تھیں۔ سوشل میڈیا پر بھی لوگوں نے ڈر ڈر کر کم سے کم لوگوں سے اس اندوہناک خبر پر بات کی۔ جو ایک نہایت سنگین معاملے پر ہماری غیر سنجیدگی کو ظاہر کرتا ہے ۔
برصغیر پاک و ہند کے قبائل میں صدیوں سے ایسی انسانیت سوز روایات چلی آرہی ہیں جنہیں بہت ممکن ہے کہ وہ لوگ بھی اچھا نہ سمجھتے ہوں، جو اس پر عمل پیرا ہیں، اس کے باوجود یہ رسمیں آج بھی ہمارے معاشرے میں نہ صرف رائج ہیں بلکہ تواتر کے ساتھ اس عمل قبیح کے ذریعہ معصوم بچیوں کے برباد ہونے کی دکھ بھری خبریں منظر عام پر آتی رہتی ہیں۔جس کی بنیادی وجہ دور دراز علاقوں میں بسنے والے لوگوں میں علم کی کمی ، انصاف کے نظام کا ادراک اور تقاضوں کا پورا نہ ہونا بھی ہے۔ ساتھ ساتھ قبائیلی نظام میں عورت کی قدر و منزلت اور تحریم و تکریم کا اس نہج پر نہ ہونا جس کی وہ مستحق ہے بھی ایک وجہ ہو سکتی ہے ۔ ورنہ عصر حاضر میں بھلا جیتے جاگتے انسان کا سودا جانوروں کی طرح کیسے کیا جاسکتا ہے؟
تمام تر حکومتی اور عدلیہ کی کاوشوں کے باوجود اس ضمن میں خاطر خواہ نتائج حاصل نہیں کئے جا سکے ہیں۔ اور پاکستان میں اب تک ماضی کی اس گھناؤنی روایت کو روکا نہیں جا سکا ہے۔ جو اس بات کی دلیل ہے کہ ہمارے ہاں بعض قبائل میں آج بھی عورت کی کوئی سماجی حیثیت اور خاندانی قدر و منزلت نہیں ہے

فیس بک کمینٹ
Tags

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker