عامر خاکوانیکالمکتب نمالکھاری

تصوف ، صوفی اورنوائے فقیر۔۔ عامر خاکوانی

عامر ہاشم خاکوانی کا تعلق سرائیکی خطے سے ہے ۔ انہوں نے ایک کالم نگار اور صحافی کی حیثیت سے اپنی صلاحیتوں کا اعتراف کرایا اور مختصر عرصہ میں قارئین کا اعتماد حاصل کر لیا ۔ روزنامہ دنیا کے میگزین ایڈیٹر ہیں لیکن اس سے بھی بڑھ کر یہ کہ ہمارے ساتھ ان کا محبت بھرا تعلق ہے ۔ ہمیں خوشی ہے کہ وہ ’’گردوپیش‘‘ کے لئے بھی لکھا کریں گے ۔ ان کا پہلا کالم روزنامہ دنیا کے شکریئے کے ساتھ شائع کیا جا رہا ہے ۔ (رضی)
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمارے ہاں تصوف اور اہل تصوف کے حوالے سے بہت سے مغالطے، غلط تصورات ، ضرورت سے زیادہ خوش گمانیاں اور غلط فہمیاں پائی جاتی ہیں۔ ان مغالطوں پر بات ہوتی رہتی ہے ، بعض کی جڑیں اتنی گہری ہیں کہ اکھاڑنا آسان نہیں۔ اگلے روز ایک صاحب نے مزے کی بات کی۔ کہنے لگے کہ درویشوں کی مثال بھی حکیموں اور ہومیوپیتھ ڈاکٹروں کی سی ہے۔حاذق حکیم اور قابل ہومیو پیتھ ڈاکٹر کی افادیت میں کوئی شک نہیں،مگر مسئلہ یہ ہے کہ چاروں طرف بکھرے حکیموں، ہومیو پیتھ میں سے شاذ ہی کوئی جینوئن طبیب نکلتا ہے۔سینکڑوں، ہزاروں اور کبھی تو لاکھوں میں سے ایک آدھ ۔ یہی حال اہل روحانیت کا ہے، بے شمار پیر فقیر نظر آئیں گے، مرشد کامل ان میں سے شاید ہی ملے ۔
صاحب روحانیت کی کھوج میں نکلا جائے تو دو بڑے بیریئرز یا رکاوٹیں سامنے آتی ہیں۔ ہمارے ہاں مجذوبوں کے حوالے سے ایک خاص قسم کی رومانویت موجود ہے۔ لوگ شارٹ کٹ چاہتے ہیں، ان کے من میں یہی ہوتا ہے کہ کسی ایسے شخص کا دامن پکڑا جائے جو ایک نظر ان پر ڈالے اور ان کی تقدیر بدل دے۔ عوامی زبان میں فوراً ہی بیڑی (کشتی )پار کرا دے۔ مجذوبوں کے حوالے سے یہ مشہور ہے کہ ان کے منہ سے جو بات نکلتی ہے ، وہ پوری ہوجاتی ہے۔ تصوف کے متعلق جو قصے کہانیاں عام ہیں، اس کا ایک بڑا حصہ مجذوبوں اور مجذوبیت کے متعلق ہے۔ ایک دانشور کی بات یاد آئی، اس نے لکھا تھا، ”سپرنارمل اور ایب نارمل میں معمولی سا فرق ہوتا ہے، ایک باریک سی لکیر دونوں کو الگ کرتی ہے۔‘‘ہوتا یہ ہے کہ سپر نارمل یعنی غیر معمولی روحانی قوت رکھنے والا مجذوب تو ممکن ہے کہیں ہو، مگر زیادہ تر کا واسطہ ابنارمل، شیزوفرینک ، ذہنی مریضوں سے پڑتا ہے ۔جن کے ہوش وحواس کام نہیں کر رہے، منہ سے رال ٹپک رہی ، جسم پر گندگی ، لباس ادھورا، بال الجھ کر جٹاؤں کی شکل اختیار کر چکے ہوتے۔ ان بیچاروں کو کسی اچھے نفسیاتی معالج خانہ میں علاج کی ضرورت ہے، یار لوگ انہیں پیر کامل مان لیتے ہیں۔ ہاتھ پیر دبائے جا رہے، خدمت ہو رہی ۔ یہ سب کسی لاٹری ، پرائز بانڈ وغیرہ کے لکی نمبرکے چکر میں کیا جاتا ہے۔ اب اس خبط الحواس ، ذہنی مریض نے منہ سے جو بھی نکال دیا،مریدین خوشی خوشی ان میں سے مخفی معنی نکالنے لگتے ہیں۔ اس نے گالیاں نکالیں تو انہیں امرت سمجھ کر ان میں سے کوئی نہ کوئی عدد برآمد کر لیا جاتا ہے۔ اتفاق سے کوئی تُکا لگ گیا تو وہ قصہ مشہور ہوگیا۔
روحانیت کی تلاش میں نکلنے والوں کوعامل حضرات کی صورت میں دوسرے بڑے بیریئر کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ عاملوں میں سے بعض تو بنگالی بابا ٹائپ ہوتے ہیں جوبھاری نذرانہ لے کر ہر ممکن ناممکن کام کرنے کی حامی بھر تے ہیں۔ بعض اخبارات میں ان کے اشتہارات بھی مل جاتے ہیں۔ عاملوں کی یہ قسم دوسرے درجے کی ہے، اگرچہ انہیں بھی اپنی مرضی کے شکار مل جاتے ہیں۔ عامل حضرات کی ایک قسم پڑھے لکھے لوگوں پر مشتمل ہے۔ یہ روحانیت پر کتابیں بھی پڑھتے رہتے ہیں، کچھ نہ کچھ معلومات بھی حاصل ہیں، کسی روحانی سلسلے یا روحانی بزرگ سے منسلک بھی رہے ۔ ان میں سے کچھ راہ سلوک کے مسافر بھی رہے ، مگر جلد پٹری سے اتر گئے۔ جاہ طلبی، مال وزر کی ہوس یا پھر اپنی شخصیت کو نمایاں کرنے کا شوق انہیں گمراہ کر دیتا ہے۔ ان کی زیادہ دلچسپی اپنی باطنی تربیت اور شخصیت کو بہتر بنانے سے زیادہ کوئی خرقعادت (غیر معمولی) صلاحیت پیدا کرنے میں رہتی ہے۔ مختلف علوم وہ سیکھتے اور بعض مخصوص مشقوں سے خود کو گزارتے ہیں۔ چلے کاٹے جاتے اور موکلات کی تسخیر کی کوششیں کی جاتی ہیں۔ اپنی اس کوشش اور محنت کے نتیجے میں بسا اوقات کچھ نہ کچھ مہارت انہیں حاصل ہوجاتی ہے۔ اس کا روحانیت یا قرب خداوندی سے کوئی تعلق نہیں۔ ایک خاص میدان میں محنت اور مشقوں سے ہندو جوگی، بعض مسیحی پادری اور بدھ بھکشو، تبتی لاما وغیرہ بھی بعض غیرمعمولی یا ماورائی قوتوں کے مالک ہوجاتے ہیں۔ اور کچھ نہیں تو تھوڑی بہت شعبدہ بازی سے کام چل جاتا ہے ۔ راہ سلوک کے مسافروں کو دقت یہ ہوتی ہے کہ درجہ اول کے ان عاملوں کو جینوئن روحانی بزرگوں سے الگ کیسے کیا جائے؟ یہ پڑھے لکھے عامل روحانی اسلوب میں شائستہ گفتگو کرتے اور مختلف روحانی کتب یا محافل سے اخذ کردہ ایسے فقرے (ون لائنر)بولتے ہیں جو مخاطب کو متاثر کر دیں ۔ مقصد روحانیت کی دھاک بٹھانا ہوتا ہے۔بڑے ٹھسے سے عجب عجب دعوے بھی کئے جاتے ہیں۔جینوئن فقیر یا درویش ایسا نہیں کرتا۔ روحانیت ہے ہی دو دعووں کے درمیان کی چیز۔ جسے معلوم ہے، وہ کہتا ہے میں نہیں جانتا، جسے کچھ نہیں پتہ، وہ صاحب روحانیت ہونے کا دعویٰ کرے گا۔
سوال یہ ہے کہ کیا کیا جائے؟ جواب بہت آسان اور سادہ ہے ۔ روحانیت کیوں حاصل کی جائے ؟ جواب ملتا ہے تاکہ ہم نیک ہوجائیں۔ ایسی صورت میں بزرگ ایک آسان حل بتاتے ہیں کہ سیرت نبوی ﷺ کا مطالعہ کیا جائے ۔ بار بار پڑھا جائے ، حتیٰ کہ واقعات یاد ہوجائیں۔ پھر پیروی کی کوشش کی جائے۔ طریقہ یہ اپنایا جائے کہ زندگی کے مختلف مراحل ، کیفیتوں اور کمزور، جذباتی ، اداس، تلخ، پرمسرت لمحات میں یہ دیکھا جائے کہ ہمارے آقا، سرکار مدینہ ﷺ ہوتے تو آپ ﷺکا طرز عمل کیا ہوتا؟ اللہ توفیق دے تو اسی عمل کو دہرانے کی کوشش کی جائے۔ معاملات میں، لین دین میں، عبادات ، اخلاقیات ہر جگہ، ہمسایوں ، ساتھیوں، بیوی بچوں، رشتے داروں، مخالفت کرنے والوں، دشمنی کرنے والوںسے سلوک، دوستوں سے محبت ، غرض ہر معاملے میں سیرت کا رول ماڈل موجود ہے، اسے اپنایا جائے ۔ روحانیت کا جوہر یا نچوڑ یہی ہے۔ پورا تصوف اسی نکتے پر کھڑا ہے ۔ صوفی یا فقیر لوگ سالک، مرید ، شاگردوں کی اسی نہج پر تربیت کرتے ہیں، اس کا تزکیہ نفس کرتے ، باطنی صفائی اور ایثار وقربانی کی عادت ڈالتے ہیں۔ غیبت، چغلی، جھوٹ، عہدشکنی، ریا کاری، بداخلاقی، بدزبانی، خود غرضی اور اس جیسی بہت سی خامیاں دور کی جاتی ہیں۔البتہ روحانیت کی مختلف اصطلاحات کو سمجھنا ہو، علم لدّنی کی مختلف شاخوں کا علم حاصل کرنا ہو تو صوفیا کی کتابیں پڑھی جائیں۔ حضرت سید علی ہجویریؒ کی کشف المحجوب جن میں سرفہرست ہے۔ دیگر صوفیا کی کتابیں پڑھی جائیں اور علم میں اضافہ کیا جائے۔ ایک مشکل ہے کہ اکثر کتابیں مشکل ، دقیق اسلوب میں لکھی گئی ہیں۔ شیخ محی الدین ابن عربی کی کتابیں پڑھنا اور سمجھنا تو اچھے خاصے عالم کے بس کی بات نہیں۔
ہماری خوش نصیبی ہے کہ اس عہد کے ایک بڑے صوفی جناب سرفراز اے شاہ نے تصوف پر نہایت آسان زبان اور اسلوب میں شاندار کتابوں کی ایک پوری سیریز تحریر کی ہے۔ سرفراز شاہ صاحب وارثی، صابری، چشتی سلسلے کے بزرگ ہیں،مگر اپنی وضع قطع میں کہیں سے وہ پیر نہیں لگتے۔ مینجمنٹ کے آدمی ہیں، کلین شیو، مرتب، منظم، انگریزی بولنے والے، ایک معروف برطانوی یونیورسٹی میں پڑھاتے رہے، قدیم وجدید پر گہری نظر رکھنے والے بزرگ ہیں۔ ان کی پہلی کتاب ”کہے فقیر ‘‘کو غیر معمولی پذیرائی ملی۔ اردو کی سب سے زیادہ شائع ہونے والی کتابوں میں سے ایک ہے۔تیس کے قریب ایڈیشن نکل چکے ۔اس کے بعد فقیر رنگ، فقیر نگری، لوح فقیر، ارژنگ فقیر شائع ہوچکی ہے۔ان سب کو بہت پذیرائی ملی۔ چند دن پہلے ان کی چھٹی کتاب نوائے فقیر شائع ہوئی ہے۔ جہانگیر بکس ناشر ہے۔ شاہ صاحب کی ساتویں کتاب حرف فقیر زیر طبع ہے۔ اس طالب علم کی نظر میں تصوف کی جدید تاریخ میں ان سے عمدہ کتابیں نہیں لکھی گئی ہیں۔ اس قدر آسان انداز میں تصوف کی مشکل گتھیاں شاہ صاحب نے سلجھائی ہیں کہ آدمی کو حیرت ہوتی ہے۔ معلوم ہوتا ہے کہ علم لدّنی کی رم جھم برس رہی ہے۔ سرفراز اے شاہ صاحب ِعرفان بزرگ ہیں۔ اس اخبارنویس کا ان سے بیس سال پر محیط تعلق ہے، بہت شفقت فرمائی۔ اس عرصے میں بیسیوں نشستیں ہوئیں۔ آج تک کبھی ان سے ایک لفظ بھی غیبت کا نہیں سنا، خود ستائی سے کوسوں دور اور اپنے بارے میں کبھی کوئی دعویٰ کیا نہ ہی اسے دنیاوی مقاصدکے لئے استعمال کرنا چاہا۔ میرے نزدیک صوفی وہ ہے جو مرید یا سالک کو اپنے گرد جمع کرنے کے بجائے ان کا رشتہ رب تعالیٰ سے جوڑ دے اور خود درمیان سے نکل جائے۔ یہ بات قبلہ شاہ صاحب میں کمال درجہ کی حد تک موجود ہے۔ قلندرڈاٹ او آرجی ویب سائٹ پر ان کے لیکچرز موجود ہیں، روحانیت میں دلچسپی رکھنے والے ان سے استفادہ کر سکتے ہیں۔

فیس بک کمینٹ

متعلقہ تحریریں

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker