اہم خبریںبلوچستان

دھرنا ختم : تدفین شروع : وزیر اعظم اور آرمی چیف کے کوئٹہ پہنچنے کا امکان

کوئٹہ : وفاقی حکومت اور کوئٹہ میں دھرنا دینے والے ہزارہ برادری کے درمیان مذاکرات کامیاب ہو گئے ہیں جس کے بعد انھوں نے دھرنا ختم کرنے کا اعلان کیا اور مقتولین کی تدفین کا عمل شروع ہے۔ خیال رہے کہ مچھ میں ہزارہ برادری سے تعلق رکھنے والے کان کنوں کے قتل کے خلاف احتجاجی دھرنا کوئٹہ کے مغربی بائی پاس کے علاقے میں چھ روز قبل شروع ہوا تھا۔
جمعے کی شب وفاقی حکومت کے وزرا اور وزیراعلیٰ بلوچستان نے دھرنے کے منتظیمن سے ایک بار پھر مذاکرات کیے جس کے بعد دھرنے کے منتظیمن پر مشتمل شہدا کمیٹی نے اعلان کیا کہ ان کے تمام مطالبات مان لیے گئے ہیں اور اس سے متعلق نوٹیفکیشنز پر دستخط کر دیے گئے ہیں۔ وفاقی وزیر علی زیدی نے ہزارہ برادری کے ساتھ ہونے والے مذاکرات کی تفصیلات کے بارے میں آگاہ کیا۔ انھوں نے بتایا کہ ہزارہ متاثرین کی مذاکراتی کمیٹی کے ساتھ بات چیت میں مچھ واقعے کے حوالے سے جے آئی ٹیم کی تشکیل کا مطالبہ تسلیم کیا گیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ بلوچستان کے حوالے سے سکیورٹی پلان پر نظرثانی کی جائے گی۔ وفاقی وزیر کے مطابق مچھ واقعے میں قتل ہونے والوں کے لواحقین میں سے جو بھی طالب علم ہیں ان کے لیے سکالر شپ دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ وزیراعلیٰ بلوچستان نے جام کمال نے کہا کہ وہ شکرگزار ہیں کہ لواحقین نے میتوں کی تدفین کا فیصلہ کیا ہے۔ وزیراعلی نے بتایا کہ وزیراعظم اور آرمی چیف بھی بلو چستان آئیں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ وہ اسے دھرنا نہیں کہیں گے کیونکہ ہزارہ برادری نے اپنے جذبات کا اظہار ایک مثالی طریقے سے کیا ہے۔ اس سے قبل جمعے کی صبح پاکستان کے وزیرِ اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ اگر ہزارہ برادری مچھ میں قتل ہونے والے اپنے 11 افراد کی تدفین کر دیں تو وہ آج ہی کوئٹہ جائیں گے مگر ’بلیک میلنگ‘ میں نہیں آئیں گے۔ اسلام آباد میں سپیشل ٹیکنالوجی زونز اتھارٹی کے قیام کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ مچھ واقعے کے بعد انھوں نے فوراً وزیرِ داخلہ کو اور پھر دو وفاقی وزرا کو یہ بتانے کے لیے لواحقین کے پاس کوئٹہ بھیجا کہ حکومت پوری طرح ان کے ساتھ کھڑی ہے۔
وزیر اعظم عمران خان کا کہنا تھا ’میں نے انھیں یقین دلایا کہ ہم لواحقین کا پوری طرح ان کا خیال رکھیں گے کیونکہ ان کے کمانے والے ہلاک ہوئے ہیں اور انھیں معاوضہ دیں گے۔‘ انھوں نے کہا کہ ’کل تک حکومت لواحقین کے سارے مطالبات مان چکی ہے، اب ان کا مطالبہ ہے کہ وزیرِاعظم آئیں تو دفنائیں گے۔‘
( بشکریہ : بی بی سی اردو )

فیس بک کمینٹ
Tags

متعلقہ تحریریں

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker