اہم خبریں

پاکستان کرکٹ کے لیے ایک اور برا دن : انگلینڈ کا دورہ پاکستان بھی منسوخ

لندن : انگلینڈ کرکٹ بورڈ نے مردوں اور خواتین کی ٹیموں کی جانب سے اکتوبر میں ہونے والا پاکستان کا دورہ منسوخ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔انگلش ٹیم نے آئندہ ماہ ورلڈ ٹی 20 مقابلوں سے قبل دو ٹی 20 میچ کھیلنے کے لیے پاکستان آنا تھا جبکہ انگلش خواتین کی ٹیم بھی اسی ماہ پاکستان کا دورہ کرنے والی تھی۔یاد رہے کہ انگلینڈ کے مردوں کی ٹیم نے سنہ 2005 کے بعد پہلی مرتبہ پاکستان کا دورہ کرنا تھا جبکہ ان کی خواتین کی ٹیم اس سے پہلے کبھی بھی پاکستان کھیلنے نہیں آئی ہے۔
انگلش بورڈ نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ ’ہم سمجھ سکتے ہیں کہ یہ فیصلہ پی سی بی کے لیے انتہائی مایوس کن ہو گا، جنھوں نے اپنے ملک میں بین الاقوامی کرکٹ کی واپسی کی میزبانی کے لیے انتھک محنت کی ہے۔ گذشتہ دو موسم گرما کے دوران ان کی انگلش اور ویلش کرکٹ کے لیے حمایت دوستی کا مظاہرہ کرتی ہے۔ پاکستانی کرکٹ پر اس فیصلے کے اثرات کے لیے ہم خلوص دل سے معذرت خواہ ہیں اور سنہ 2022 میں اپنے اہم دوروں کے منصوبوں پر زود دیتے ہیں۔‘یاد رہے کہ پاکستان نے 2020 اور 2021 میں وبا کے دوران انگلینڈ کے دورے کیے تھے۔ 2020 میں تو خاص طور پر پاکستان نے میچوں کے لیے بائیو سکیور ببل کی کڑی شرائط پر اتفاق کیا تھا۔
انگلش بورڈ کے فیصلے کے ردِ عمل میں پاکستان کرکٹ بورڈ کے نومنتخب چیئرمین رمیز راجہ نے بی بی سی ورلڈ سروس سے بات کرتے ہوئے کہا: ’میں بہت زیادہ مایوس ہوں اور اتنے ہی شائقین بھی۔ اس وقت ہمیں انگلینڈ کی ضرورت تھی۔’جب پاکستان کو مغربی بلاک کی ضرورت تھی تو انھوں نے ہماری مدد نہیں کی‘۔
انھوں نے مزید کہا ’سکیورٹی دنیا میں کسی جگہ بھی مسئلہ ہو سکتا ہے۔ جس طرح مغربی بلاک نے مسئلے کو ہینڈل کیا ہے، اس سے (ہمیں) لگتا ہے کہ ہمیں غیر اہم سمجھا گیا ہے۔‘
پاکستان کی طرف سے 57 ٹیسٹ میچ کھیلنے والے رمیز راجہ نے مزید کہا کہ ’وہ ذہنی تھکاوٹ کا کہہ سکتے ہیں، لیکن یہ ناکافی ہے۔‘اس سے پہلے رمیز راجہ نے ایک ٹویٹ میں کہا تھا کہ ’اپنے وعدے سے دستبردار اور اپنی کرکٹ کی برادری کے ایک ایسے رکن کو اس وقت چھوڑ دینے سے جب اسے اس کی سب سے زیادہ ضرورت ہے، انگلینڈ سے مایوسی ہوئی ہے۔ ہم انشااللہ یہ وقت بھی گزار لیں گے۔ یہ پاکستان ٹیم کے لیے ایک ویک اپ کال ہے کہ وہ دنیا کی بہترین ٹیم بن جائے تاکہ ٹیمیں اس کے ساتھ کھیلنے کے لیے قطار میں لگیں، بغیر کسی عذر کے۔‘
انگلش بورڈ نے دورہ منسوخ کرنے کی وجوہات کا ذکر کرتے ہوئے کہا ہے کہ ’ہمارے کھلاڑیوں اور سٹاف کی ذہنی اور جسمانی بہبود ہماری اولین ترجیح ہے اور آج ہم جس وقت میں رہ رہے ہیں اس میں یہ اور بھی ضروری ہے۔ ہم جانتے ہیں کہ اس خطے میں سفر کے بارے میں خدشات ہیں اور ہمیں یقین ہے کہ ایسی صورتحال میں آگے بڑھنے سے کھلاڑیوں پر دباؤ میں اضافہ ہو گا، جو پہلے ہی محدود کووڈ ماحول میں طویل عرصے تک رہنے کے بعد اس سے نمٹ رہے ہیں۔
‘ہمارے ٹی 20 مینز سکواڈ کے لیے اس میں ایک اضافی پیچیدگی ہے۔ ہم سمجھتے ہیں کہ ایسے حالات میں دورہ کرنا آئی سی سی مینز ٹی 20 ورلڈ کپ کے لیے مثالی تیاری نہیں ہو گی، جہاں اچھی کارکردگی کا مظاہرہ ہماری 2021 کی اولین ترجیح ہے۔’
واضح رہے کہ اس سے پہلے گذشتہ ہفتے راولپنڈی میں پاکستان اور نیوزی لینڈ کی ٹیموں کے درمیان 17 ستمبر کو کھیلے جانے والا پہلا ایک روزہ میچ آغاز سے صرف چند گھنٹے قبل منسوخ کر دیا گیا تھا اور نیوزی لینڈ کی ٹیم نے سکیورٹی خدشات کی وجہ سے پاکستان کا دورہ جاری رکھنے سے بھی انکار کر دیا تھا۔
اس کے بعد پاکستان کرکٹ بورڈ کی جانب سے جمعے کو جاری ہونے والے بیان میں کہا گیا تھا کہ دونوں ممالک کے مابین ہونے والی ون ڈے اور ٹی 20 سیریز ملتوی کر دی گئی ہے اور نیوزی لینڈ کی ٹیم نے سیریز نہ کھیلنے کا ’یکطرفہ‘ فیصلہ کیا ہے۔دوسری جانب اتوار کے روز نیوزی لینڈ کرکٹ کے چیف ایگزیکٹو ڈیوڈ وائٹ نے کہا تھا کہ جمعے کے روز نیوزی لینڈ کرکٹ ٹیم کو حکومت کی جانب سے ’مخصوص اور مصدقہ‘ خطرے کی اطلاع کے بارے میں آگاہ کیا گیا تھا جس کی تصدیق نیوزی لینڈ کرکٹ کے سکیورٹی کنسلٹنٹس کے علاوہ آزادانہ طور پر بھی کی گئی تھی۔
ڈیوڈ وائٹ نے بتایا کہ ’اس خطرے کی بنیادی نوعیت کے بارے میں تو پی سی بی کو آگاہ کر دیا گیا تھا لیکن اس کی مخصوص تفصیلات نہ بتائی جا سکتی تھیں، نہ بتائی جائیں گی۔۔۔ نہ ہی نجی حیثیت میں اور نہ ہی عوامی طور پر۔‘
یہاں یہ بات بڑی اہمیت کی حامل ہے کہ نیوزی لینڈ کی کرکٹ ٹیم کو آئندہ سال دوبارہ پاکستان کا دورہ کرنا ہے جس میں اسے تین ون ڈے انٹرنیشنل اور دو ٹیسٹ کھیلنے ہیں۔ یہ ون ڈے انٹرنیشنل میچز آئی سی سی سپر لیگ کا حصہ ہوں گے۔ پاکستان کرکٹ بورڈ کی یہ کوشش ہوگی کہ وہ موجودہ دورے کی منسوخی کے نتیجے میں متاثر ہونے والے میچز آئندہ سال نیوزی لینڈ ٹیم کے پاکستان کے دورے میں ایڈجسٹ کروا کر انھیں ممکن بنائے۔
( بشکریہ : بی بی سی اردو )

فیس بک کمینٹ
Tags

متعلقہ تحریریں

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker