اہم خبریںسرائیکی وسیب

ڈیرہ غازی خان : ہاسٹل میں مقیم دو ڈاکٹر کوروناکا شکار ، ساتھیوں میں خوف و ہراس

ڈیرہ غازی خان : ڈیرہ غازیخان میں دو نوجوان ڈاکٹروں کے کورونا وائرس کے ٹیسٹ مثبت آنے کے بعد وہاں کے ڈاکٹروں میں خوف و ہراس پھیل گیا ہے اور سرکاری ٹیچنگ ہسپتال میں کام کرنے والے ڈاکٹروں نے اپنی اوراپنے ساتھیوں کی جان کوشدیدخطرات کے تناظرمیں فوری مددکی اپیل کی ہے ۔
باوثوق ذرائع سے ملنے والی خبروں کے مطابق ڈیرہ غازیخان کے ٹیچنگ ہسپتال کے دونوجوان ڈاکٹرز،ڈاکٹراسامہ اورڈاکٹرصباء وائرس کا شکار ہو گئے ہیں ۔ ڈاکٹروں کے مطابق حکومت نے بغیرحفاظتی سامان ان سے ڈیوٹی لی تھی کاشکارہوچکے ہیں ۔ ڈاکٹرصباءڈیرہ غازیخان کے ٹیچنگ ہسپتال کے گرلز ہاسٹل میں رہائش پذیر ہیں جہاں ان کے علاوہ 25سے 30دیگرڈاکٹرزبھی رہائش پذیرہیں جن کی زندگیاں بھی اس وقت داﺅ پرلگ چکی ہیں ۔اسی طرح ڈاکٹراسامہ بھی ٹیچنگ ہسپتال کے ہوسٹل میں رہائش پذیرہیں جہاں ان کے علاوہ 50سے 60نوجوان ڈاکٹرزبھی رہائش پذیرہیں جوسب اس وقت سخت خوفزدہ ہیں اور امکان ہے ان میں سے بعض کو کوروناوائرس ہوسکتا ہے ۔
تاہم ہسپتال کی انتظامیہ نے ابھی تک نہ توہوسٹلز کوبندکیاہے اورنہ ہی ڈاکٹرزکی زندگیوں کی حفاظت کے لئے ٹھوس اقدامات اٹھائے ہیں ان ڈاکٹروں کے والدین اپنے بچوں کی زندگیاں بچانے کے لئے ہسپتال پہنچ رہے ہیں ۔
ڈیرہ غازیخان کاعلاقہ وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کے علاوہ وفاقی وزیرزرتاج گل ،سابق صدر فاروق لغاری اوران کے بیٹے مسلم لیگ ن کے ایم این اے اویس لغاری ،سابق گورنر پنجاب ذوالفقارکھوسہ اورسابق چیف منسٹردوست محمد کھوسہ اورموجودہ ایڈوائزرچیف منسٹرحنیف پتافی کاآبائی علاقہ ہے ۔ٹیچنگ ہسپتال کے ڈاکٹرز اورڈاکٹرزکی تنظیموں نے ٹیچنگ ہسپتال ڈیرہ غازیخان اورقرنطینہ سنٹرڈیرہ غازیخان کی فوری بندش کے علاوہ یہاں موجود تمام ڈاکٹرزکی سکریننگ کرنے اوران کوفوری طورپرتمام ترحفاظتی سامان دینے کامطالبہ کیاہے ۔

فیس بک کمینٹ
Tags

متعلقہ تحریریں

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker