اختصارئےظفر آہیرلکھاری

ظفر آہیرکا اختصاریہ:پون صدی کا قصہ ہے کوئی نئی بات نہیں۔ !!!!!

نئی نسل جو کتاب سے دور اور سوشل میڈیا کے زیادہ قریب ہے اس کو ملک کی موجودہ سیاسی صورتحال کچھ عجیب لگ رہی ہے وگرنہ تو ۔۔۔
قائد اعظم کی پراسرار موت ،لیاقت علی خاں کا بہیمانہ قتل ،فاطمہ جناح کی لاش پر تشدد کے نشانات سے لیکر ذوالفقار علی بھٹو کی پھانسی،محترمہ بے نظیر کی شہادت ، کسی بھی وزیراعظم کا اپنی آئینی مدت کا پورا نہ کرنا ،کسی کا جلاوطن ہونا تو کسی کا گمنامی کی زندگی میں چلے جانا ۔
خان ولی خان ،جی ایم سید غوث بخش بزنجو شیخ مجیب الرحمن ،حسین شہید سہروردی سمیت بہت سے سیاستدانوں کا غدار ٹھہرایا جانا ، نواب زادہ نصراللہ خاں کو مبینہ طور پر زہر دیا جانا، کسی کو میر جعفر کہنا تو کسی کو میر صادق ایک پرانا کھیل ہے۔ہاں اب جو نئی بات ہوئی ہے وہ یہ کہ ملک دیوالیہ ہونے والا ہے اور یہ تو ہونا تھا ۔جو بوتے رہے وہ فصل پک کر تیار تو ہونی تھی۔
افسوس اس بات کا ہے جنہوں نے بربادی کی فصل بوئی وہ اب بھی مراعات انجواۓ کررہے ہیں اورعوام جو شدید تریں مشکلات سے دوچا ر ہے مسلسل انہی کی کٹھ پتلیوں کے اشارے پر ناچ رہی ہے وہی پرانی باتیں
زندہ باد
مردہ باد
آگ لگا دو
شاید کبھی اس عوام کو عقل آجاۓ کہ” پیج ایک” ہونے پر سب اچھا کیوں ہوتا ہے اور وہی پیج پھٹ جانے پر سب کچھ خراب کیوں ہوجاتا ہے ۔
اور میں یقین دلاتا ہوں جس دن عوام کو یہ بات سمجھ آگئی اور تعصب و جہالت کی عینک اتر گئی اس دن کٹھ پتلی سیاستدانوں سے بھی جان چھوٹ جاۓ گی اور ملک بھی ترقی کر جاۓ گا !!!!

فیس بک کمینٹ

متعلقہ تحریریں

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker