اہم خبریں

بچانے والے ہی مجھے نوچتے رہے۔۔مینارپاکستان پر جشن آزادی کا نشانہ بننے والی ٹک ٹاکرعائشہ اکرام

لاہور: 14 اگست کو گریٹر اقبال پارک میں پیش آنے والے واقعہ کے بارے میں خاتون ٹک ٹاکر عائشہ کا کہناہے کہ یہ میرے لئے انتہائی دکھ کادن ثابت ہوا،مجھے بچانے والے ہی مجھے نوچتے رہے۔ تفصیلات کے مطابق لاہور گریٹر اقبال پارک میں منچلوں کی ستائی خاتون ٹک ٹاکر عائشہ نے روتے ہوئے بیان دیا کہ میں آزادی والے دن میں اپنے6ساتھیوں کیساتھ مینار پاکستان گئی اور وہاں ٹک ٹاک ویڈیو بنا رہی تھی کہ کچھ لڑکے ہمارے پاس آگئے اور سیلفی کیلئے کہا اسی دوران300 سے 400 افراد نے مجھ پر حملہ کردیااس کے بعدمیں اور میرا گروپ ہجوم میں پھنس گئے، بھاگ دوڑ میں مجھے وہاں ایک پانی کا تالاب نظر آیا سوچا اس میں کود جاوں مگر مجھ سے ایسا نہ ہوا،15پر کال کی مگر وہ بھی کام نہ آئی،لوگ میرے بال نوچتے رہے ۔ انہوں نے کہا کہ حملہ آوروں نے اس حد تک دھکا دیا اور کھینچتے رہے کہ میرے کپڑے بھی پھٹ گئے اور اس کے بعد ایک ہجوم نے مجھے اٹھا لیا اور ہوا میں اچھالنے لگے،میں دہائی دیتی رہی مگر کسی نے میری نہ سنی،حملہ آوروں نے انگوٹھی اور کان کی بالیاں، موبائل فون اور کچھ دیگر قیمتی سامان چھین لیا۔بعض لوگ مدد کیلئے بھی آئے مگرکچھ نہ ہوا۔
مجھے یقین نہیں تھا کہ میرے ساتھ ایسا ہو گا۔14اگست آزادی کا دن تھا اور میرے ساتھ اتنا کچھ ہو گیا اس بات کا اندازہ بھی نہیں لگا سکتی۔میں نے کسی کا کچھ نہیں بگاڑا تو مجھے یہ سزا کیوں ملی،جو میرے ساتھ ہوا ہے وہ کسی اور کے ساتھ بھی ہو سکتا ہے۔میری اعلی حکام سے گزارش ہے کہ کوئی ایسا قانون بنایا جائے دوبارہ ایسا واقعہ رونما نہ ہو۔
واضح رہے کہ مذکورہ خاتون ٹک ٹاکر کو ہراساں کرنے کے واقعے میں ملوث 400 نامعلوم افراد کے خلاف مقدمہ درج کرلیا گیا۔پولیس کے مطابق متاثرہ خاتون کی مدعیت میں مقدمہ درج کیا گیا ہے۔ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہونے کے بعد وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے واقعے نوٹس لیا اور سی سی پی او سے رپورٹ طلب کرتے ہوئے کارروائی کا حکم دیا۔لاہور پولیس کے مطابق400 افراد کیخلاف مقدمہ درج کرلیا گیا ہے۔
(بشکریہ: سب نیوز)

فیس بک کمینٹ
Tags

متعلقہ تحریریں

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker