ڈاکٹر عباس برمانیلکھاریمزاح

سی پیک اقبال سے ایک احسن گفتگو ۔۔ ڈاکٹر عباس برمانی

ناظرین آج ہمارے مہمان ہیں جناب وزیرداخلہ اور ہم ان سے ملک میں امن وامان کی صورتحال،دہشت گردی ،جرائم اور اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے تحریک کے متعلق گفتگو کریں گے ، شکریہ سر آپ نے اپنی گوناگوں مصروفیات کے باوجود ہمیں وقت دیا۔۔۔۔
ج: آپ کے خلوص اور محبت کی وجہ سے مجھے وقت نکالنا پڑا ،آپ سے دیرینہ تعلق ہے ، آپ کے سسر مرحوم سے نیاز مندی رہی ہے، ورنہ تو سی پیک کی مصروفیات اتنی زیادہ ہیں کہ شب وروز کا علم بھی نہیں ہوتا، سی اور پیک دو لفظ اور پانچ حرف ہیں لیکن مت پوچھیے کہ میرا کیا حال کر دیا انہوں نے ، ناشتہ دوپہر کو کرتا ہوں ،دوپہر کا کھانا رات کو کھاتا ہوں ،رات کا کھانا صبح کھاتا ہوں، تہجد اشراق کے وقت اور اشراق عصر کے وقت، نیند دوران سفر یا میٹنگز میں پوری کرتا ہوں ،بس نہ پوچھیے، بہت بھاری ذ مہ داری ہے میرے ناتواں شانوں پر اس سی پیک کی۔۔۔
س: اس مرحلے پر جب حکومت کی مدت چھ ماہ سے بھی کم رہ گئی ہے یہ بلوچستان میں جو تبدیلی آئی ہے آپ کی جماعت میں بغاوت ہوئی ایک طاقتور وزیراعلیٰ کو ہٹنا پڑا اور ایک غیر معروف ق لیگی نوجوان وزیر اعلیٰ بن گئے۔۔۔
ج: یہ سی پیک کے خلاف انتہائی گھناؤ نی سازش ہے ، گزشتہ چار سالوں سے ہماری حکومت کے خلاف جو سازشیں جاری ہیں وہ ہمارے خلاف نہیں سی پیک کے خلاف ہیں، آپ ایک کہنہ مشق صحافی ہیں آپ غور کریں کہ پانچ سو ووٹ لینے والے ایم پی اے کو پاکستان کے سب سے بڑے صوبے کا وزیراعلی بنا کے چین کے ایک ارب بیس کروڑ عوام کو کیا پیغام دیا گیا ہے ، آپ ایک باخبر صحافی ہیں آپ بخوبی جانتے ہیں کہ اس کے پیچھے کون ہے!
س: لیکن سر جن کی طرف آپ نے اشارہ کیا ہے وہ سی پیک کے خلاف کیوں ہوں گے آخر؟
ج : ان کا آج تک کسی کو پتہ چلا ہے کہ وہ کسی کے حق میں کیوں ہیں اور کسی کے خلاف کیوں ہیں ! اور کوئی پتہ چلتا ہے کہ وہ کب کسی کے حق میں ہو جائیں اور کب کسی کے خلاف، میں آپ کو بتاؤ ں کہ پڑھے لکھے لوگوں اور یہاں تک کہ اداروں تک کو اب تک سی پیک کی اہمیت کا اندازہ نہیں ہو سکا، میرے شب و روز۔۔۔۔
س: سر اپوزیشن جماعتیں اور کچھ مذہبی تنظیمیں سانحہ ماڈل ٹاؤن کے خلاف تحریک شروع کر رہی ہیں ،اسے پرتشدد ہونے سے روکنے کے لیے آپ کیا اقدامات کر رہے ہیں!
ج: دیکھیں یہ سی پیک پر آخری حملہ ہے، ماڈل ٹاؤن میں کیا ہوا تھا ، منہاج والوں نے بیریئر لگا رکھے تھے جن سے اہل علاقہ تنگ تھے، انہیں ہٹانے کے لیے پولیس آئی تو ہجوم نے پولیس پر زہر آلود پتھروں سے پتھراؤ کر دیا ،پولیس کو اپنے دفاع میں گولیاں چلانی پڑیں، لیکن یہ بات اتنی سادہ نہیں ہے طاہر القادری کے بیریئر ملکی ترقی اور سی پیک کے راستے میں حائل تھے۔
س: یہ آپ عجیب بات کر رہے ہیں، آپ یہ بات کیوں بھول رہے ہیں کہ ہائی کورٹ نے ان بیریئرز کے حق میں سٹے آرڈر دے رکھا تھا۔۔
ج: یہی تو کر رہی ہیں عدالتیں ، میاں صاحب کیوں دھکے کھاتے اور چیختے پھر رہے ہیں کہ مجھے کیوں نکالا، اسی لیے نکالا کہ انہوں نے سی پیک کی ذمہ داری مجھے سونپی اور مجھے فری ہینڈ دیا ہوا تھا۔
س: لیکن جناب اسی عدالت سے آپ کو حدیبیہ میں ریلیف بھی تو ملا اور بڑے بڑے قانون دانوں کی اکثریت اس فیصلے پہ انگلیاں اٹھا رہی ہے۔
ج: یہ انگلیاں دراصل سی پیک پہ اٹھ رہی ہیں، معزز جج صاحب کا تعلق نہ صرف ایک قدیم نظریاتی مسلم لیگی خاندان سے ہے بلکہ بلوچستان سے بھی ہے وہ سمجھتے ہیں سی پیک کی اہمیت کو۔۔۔
س: زرداری صاحب کہتے ہیں کہ یہ منصوبہ ان کا ہے ،انہوں نے چین کے متعدد دورے کیے اور چینی حکام کو اس منصوبے کی اہمیت اور افادیت کا قائل کیا۔
ج : زرداری صاحب بیچارے ہوش میں کب ہوتے ہیں، آپ کو سوشل میڈیا پہ چلنے والی ان کی اسلام آباد جلسے کی ویڈیو تو یاد ہو گی جس میں وہ چھپ کے ایک شیشی سے گھونٹ لگا رہے ہیں اور پھر سرور کے عالم میں ڈانس کر رہے ہیں۔۔۔۔۔ سی پیک کا خواب اس وقت دیکھا گیا جب زرداری صاحب بمبینو سینما چلاتے تھے اور پولو کھیلتے تھے ، ہمارے محلے میں ایک نیک اور بزرگ خاتون مائی اللہ والی رہتی تھیں سی پیک کا خواب انہوں نے دیکھا اور میری والدہ کو سنایا جو( ابلیس )ضیا کی مجلس شوریٰ کی رکن تھیں ،انہوں مجھے فون کر کے آگاہ کیا ۔۔۔میں ان دنوں آکسفورڈ میں بزنس اور اکنامکس کی اعلیٰ تعلیم حاصل کر رہا تھا۔۔۔
س: آکسفورڈ سے یاد آیا عمران خان کہتے ہیں کہ آکسفورڈ والے چھٹیوں کے دوران ایک ایک دو دو ماہ کے ریفرشر کورس قسم کے ڈپلومے کراتے ہیں آپ ایسا ہی کوئی ڈپلومہ لے آئے تھے۔
ج: ڈپلومہ ہی لایا تھا نا ،کوئی نکاح نامہ نہیں لایا تھا،اور ڈپلومہ ڈپلومہ ہوتا ہے دو ماہ کا ہو یا دو سال کا ، اور آپ کوکین کے نشے میں کی گئی غیر شرعی، سی پیک مخالف باتوں کو اہمیت دیتے ہیں۔۔۔
س: جناب آپ ملک کے وزیر داخلہ ہیں اور اگر کوکین جنوبی امریکہ سے آ کر بنی گالا پہنچ رہی ہے تو اس کا ذ مہ دار کون ہے !
ج : اے این ایف والوں سے پوچھیں، میں ملک کا مستقبل بنانے میں مصروف ہوں، سی پیک میرا اوڑھنا بچھونا ہے، میرے شب و روز ، فجر سے عشا اور ڈنر سے بریک فاسٹ۔۔۔۔
خواتین وحضرات جناب سی پیک اقبال سے مزے مزے کی گفتگو جاری رہے گی لیتے ہیں ایک مختصر بریک ، جائیے گا مت ،اس دوران آپ گوادر کے پلاٹوں اور ہاؤ سنگ سکیموں کے اشتہارات دیکھیں اللہ آپ کا حامی و ناصر ہو۔۔۔

فیس بک کمینٹ

متعلقہ تحریریں

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker