اہم خبریں

پاکستان عالمی تنہائی کا شکار ہے ، ایک لیڈر فون کرتا نہیں دوسرا سنتا نہیں‌: نواز شریف

لندن : سابق وزیر اعظم اور پاکستان مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف نے حکومتی اقدامات پر تنقید کرتے ہوئے کہا ہے پاکستان عالمی تنہائی کا شکار ہے، دنیا کا ایک لیڈر فون کرتا نہیں اور دوسرا سنتا نہیں ہے۔
سابق وزیراعظم نواز شریف نے کراچی میں پی ڈی ایم کے جلسے سے ویڈیو خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ‘کراچی پاکستان کا دل ہے اور یہاں پورے پاکستان کے یعنی ہر قومیت کے لوگ رہائش پذیر ہیں اور یہ منی پاکستان ہے’۔انہوں نے کہا کہ ‘کراچی والو کیا آپ کو معلوم ہے کہ پچھلے تین سال میں پاکستان اور کراچی پر کیا گزری، ایک اچھے بھلے اور خوش حال پاکستان کو اندھیروں میں دھکیلنے کے لیے 2018 کے انتخابات میں دھاندلی کی شکل میں ایک سازش رچائی گئی، جس کا خمیازہ آج ہم بھگت رہے ہیں’۔
ان کا کہنا تھا کہ ‘آج پاکستان میں جو بربادی دیکھ رہے ہیں، یہ اسی سازش کا نتیجہ ہے اور اگر یہ سازش نہ ہوتی تو آج پاکستان بڑی تیزی کے ساتھ خوش حالی کی منزلیں طے کر رہا ہوتا اور آپ کی دہلیز پر خوش حالی دستک دیتی اور آج آپ کو اپنے بچوں کا پیٹ پالنے کی فکر نہیں ہوتی’۔
سابق وزیراعظم نے کہا کہ ‘کیونکہ آپ کے پاس روزگار ہوتا، سماجی اور معاشی انصاف، عزت اور خود مختاری ہوتی، آٹے، دال اور چینی کے لیے قطاروں میں نہ لگنا پڑتا، یہ اس لیے ہوا کہ آپ کے منتخب وزیراعظم کو نکالنے کے لیے پاناما جیسے ڈرامے رچائے گئے اور عدالتوں سے زبردستی من پسند فیصلے لیے گئے بلکہ فیصلے دلوائے گئے’۔
انہوں نے کہا کہ ‘نواز شریف اور ان کے ساتھیوں کو، اور خاص کر مجھے اور مریم نواز کو 150 سے زیادہ عدالتی پیشیاں بھگتنی پڑیں، شہباز، شاہد خاقان عباسی اور دیگر ساتھیوں پر ناجائزمقدمے بنائے گئے اور روز عدالتوں میں پیشیاں بھگتے ہیں’۔ان کا کہنا تھا کہ ‘مجھے نیب پر دباؤ ڈال کر 10 سال کی ناجائز سزا، مریم کو 7 سال کی سزا دلوائی گئی اور جج نے لکھا کوئی کرپشن نہیں ہے، بس سزا دلوانی تھی لکھ دیا ہے اور ہم سب کو قید و بند میں دھکیلا گیا، ہمارے پارٹی قائدین، شہباز شریف، ہمارے بچوں کو بھی قید میں دھکیلا گیا’۔
انہوں نے کہا کہ ‘جسٹس شوکت صدیقی کو کہا گیا کہ نوازشریف اور مریم نواز کی سزا برقرار رکھو ورنہ ہماری دو سال کی محنت ضائع ہوجائے گی کیا آپ پوچھنا چاہتے ہیں کہ یہ الفاظ کس نے کہے اور کون سی دو سال کی محنت ضائع ہونے کا اندیشہ تھا’۔ان کا کہنا تھا کہ ‘یہ وہی لوگ ہیں جو ووٹ چوری کرکے عمران خان کو لے کر آئے ہیں، اور 22 کروڑ عوام کے سر پر اس کو مسلط کردیا ہے، سب کچھ آپ کی آنکھوں کے سامنے ہوا اور آج بھی ہورہا ہے لیکن ہم خاموش ہیں’۔
سابق وزیراعظم نے کہا کہ ‘پھر ہم رونا روتے ہیں ملک ترقی کیوں نہیں کرتا، ملک کیوں پستی کی طرف جارہا ہے، ملک کیوں اور پیچھے دھنستا جا رہا ہے، آٹا، دال، چینی کیوں مہنگی ہوگئی ہیں اور ادویات کیون پہنچ سے دور ہوگئی ہیں اور بجلی کے بلوں نے کمر کیوں توڑ کر رکھ دی ہے، کبھی پوچھا ہے آپ نے؟’۔انہوں نے کہا کہ ‘پاکستان عالمی تنہائی کا شکار کیوں ہوگیا ہے، کہاں گئی سبز پاسپورٹ کی وہ عزت، کہاں گئی وہ سبز پرچم کی عزت، دنیا کا ایک لیڈر فون نہیں کرتا اور دوسرا لیڈر فون سنتا نہیں ہے’۔
ان کا کہنا تھاکہ ‘معاشرےمیں انصاف نام کی کوئی چیز نہیں ہے، غریب بیچارا دھکے کھاتا ہے، پاکستان کے 21 کروڑ عوام غریب ہیں اور چند لاکھ لوگ وسائل پر بھی قابض ہیں اور پاکستان کی زمینوں کے بھی مالک بنے ہوئے ہیں ۔

فیس بک کمینٹ
Tags

متعلقہ تحریریں

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker