اختصارئےحسنین رضویلکھاری

حسنین رضوی کا اختصاریہ: نیو ائر نائٹ لٹھ بردار مولوی اور کرونا

طالب علمی کا زمانہ تھا جب بھی نیو ائر نائٹ آتی لاہور کی مال روڈ ہمارا ٹھکانا ہوتی چیرنگ کراس ، پی سی ہوٹل ، جم خانہ ، چڑیا گھر ، باغ جناح تک خوب رونق ہوتی ، ہلاگلا تمام رات چلتا ، موٹر سائیکل کے سائلنسر نکانے کی بے ہودگی ابھی شروع نہیں ہوئی تھی ، نہ اسلحے کی نمائش ، نہ ہوائی فائرنگ ، نہ خواتین سے بدتمیزی ابھی شروع ہوئی تھی ۔۔ صرف لائٹنگ ہوتی ، جیسے ہی 12 بجکر ایک منٹ ہوتا آسمان آتش بازی سے جگمگا اٹھتا ، ہم خوب تالیاں بجاتے ،خوشی مناتے ،ایک دوسرے کو نئے سال کی مبارک باد دیتے اور رات ایک بجتے ہی اپنے گھروں کو لوٹ جاتے ۔۔۔
پھر یوں ہوا کہ ” اسلام ” کا بول بالا ہونے لگا ، ایک اسلامی تنظیم کے طلبہ مجاہدین ہاتھوں میں لٹھ لیکر ہمیں مشرف بہ اسلام کرنے نکل آتے جو بھی گاڑی مال روڈ پر ہلاگلا کرتی نظر آتی اس کے شیشے توڑے جاتے ،خواتین کو زود و کوب کیا جاتا ،پی سی ہوٹل کے اطراف کا علاقہ میدان جنگ بن جاتا ۔ پھر لٹھ کے ساتھ ساتھ اسلحہ بھی ساتھ آنے لگا اور پھر دوسری طرف سے بھی اسلحہ نکلنے لگا ۔۔ اور پھر دفعہ 144 لگنے لگی ،پولیس چھاپے مارنے ، گرفتاریاں کرنے نکل کھڑی ہوتی ، انتظامیہ اپنے دفاتر میں ” کنٹرول ” روم فعال کردیتی ، بے ضرر سی آتش بازی کرنے پر بھی پولیس دھر لیتی لیکن حیرت انگیز طور پر ” اسلامی مجاہدین ” کو کچھ نہ کہا جاتا اور وہ سرشام ڈنڈے ہاتھوں میں لیے ہم جیسے بھٹکے ہووں کو سبق سکھانے نکل کھڑے ہوتے ۔۔
اور پھر قدرت کو جلال آگیا چین سے ایک وبا پھوٹی اور دیکھتے ہی دیکھتے اس وبا نے نہ مجاہدین دیکھے ، نہ صالحین دیکھے ، نہ مولانے دیکھے ،نہ حافظ دیکھے اور نہ ہم جیسے گناہ گاروں کو بخشا سب کو سبق سکھانا شروع کردیا ، کسی نے کیا خوب کہا تھا کہ اللہ کی لاٹھی بے آواز ہوتی ہے ، انتہاپسندی قدرت کو پسند نہیں ، اسلام میانہ روی اور اعتدال پسندی کا درس دیتا ہے لیکن جاہل مولویوں اور مذہبی جنونیوں کو کون سمجھاۓ ۔۔ اب نہ وہ نیو ائر نائٹ کے جشن رہے نہ وہ اسلامی ” لٹھ ” بردار رہے ۔ قدرت کے ایک اشارے سے سب کچھ ختم ہوگیا ۔

فیس بک کمینٹ
Tags

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker