2018 انتخاباتاہم خبریں

پی ٹی آئی نے عمران خان کو وزیر اعظم نامزد کر دیا

اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی پارلیمانی کمیٹی کے اجلاس میں چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کو باضابطہ طور پر وزیراعظم نامزد کردیا گیا ہے۔عمران خان پارلیمانی پارٹی اجلاس میں شرکت کے لیے مقامی ہوٹل پہنچے تو لوگوں نے انہیں مبارک باد پیش کی، جس پر عمران خان نے بھی جواب میں مبارک باد دی۔دوسری جانب پی ٹی آئی کے ترجمان فواد چوہدری نے بیان دیا کہ حکومت سازی کا عمل بہت مشکل کام ہے اور عمران خان آج اپنے خیالات پارلیمانی پارٹی کے سامنے رکھیں گے۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے واضح کیا کہ ایم کیو ایم الیکشن جیت کر آئی ہے تاہم ہمیں ان کی ضرورت ہے۔علاوہ ازیں عمران خان نے سرکاری پروٹوکول پر ناراضی کا اظہار کرتے ہوئے ٹریفک نہ روکنے کی ہدایت کی۔اس حوالے سے پی ٹی آئی کے رہنما نعیم الحق نے کہا کہ حکومت نے عمران خان کو مکمل وزیراعظم کا پروٹوکول دیا جبکہ ہم نے پولیس کی صرف 4 گاڑیوں کی درخواست کی تھی۔انہوں نے بتایا کہ مختلف ایجنسیوں کی گاڑیاں، پولیس اور رینجرز شامل تھیں لیکن عمران خان چاہتے ہیں عوام کو کم سے کم تکلیف ہو۔ان کا کہنا تھا کہ عمران خان وزیراعظم کے پروٹوکول کے خلاف ہیں اور وہ پروٹوکول کے باعث عوام کو ہونے والی پریشانی سے بے چین رہے۔پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد میں پاکستان تحریک انصاف نے کی پارلیمانی پارٹی کے اجلاس میں عمران خان کو متفقہ طور پر پارلیمانی رہنما مقرر کر کیا گیا ۔ پیر کو اسلام آباد کے ایک نجی ہوٹل میں پاکستان تحریک انصاف کی پارلیمانی پارٹی کا اجلاس منعقد ہوا۔ جس میں شاہ محمود قریشی نے عمران خان کی بطور پارلیمانی رہنما تقرری کی تحریک پیش کی۔اس اجلاس میں تحریک انصاف کے ملک بھر سے نومنتخب اراکین نے شرکت کی اور تمام ارکان اسمبلی نے کھڑے ہو کر اس تحریک کی حمایت کی۔اجلاس کے بعد صحافیوں سے بات کرتے ہوئے تحریک انصاف کے رہنما شاہ محمود قریشی نے کہا کہ میں نے بطور وائس چیئرمین قرارداد پیش کی، جسے تمام پارلیمانی پارٹی نے منظور کر لیا۔
انھوں نے کہا کہ اس سے ظاہر ہوا کہ عمران خان ہمارے وزیرِ اعظم کے امیدوار ہیں۔انھوں نے صحافیوں کو آگاہ کیا کہ آج ہونے والے اجلاس میں عمران خان نے آنے والے دنوں کے چیلنجوں کے بارے میں پارٹی کو اعتماد میں لیا اور ان سے کہا کہ آپ سے قوم کی توقع کیا ہیں۔
شاہ محمود قریشی نے کہا کہ عمران خان نے نومنتخب ارکان کو بتایا کہ ’عوام نے آپ کو روایتی سیاست کا نہیں تبدیلی کے لیے ووٹ دیا ہے۔ ہم ثابت کریں گے کہ ہمارا طریقۂ کار مختلف ہو گا۔‘انھوں نے کہا کہ متحدہ حزبِ اختلاف بہت کمزور ہے کیوں کہ اس میں کوئی مشترک نظریہ نہیں ہے۔تحریکِ انصاف کے رہنما نے عمران خان کے حوالے سے بتایا کہ ’ہم نے پارلیمان کو اہمیت دینی ہے اور اس کی عزت میں اضافہ کرنا ہے۔ میں خود پارلیمان میں پیش ہوں گا اور جو اس دوران جو سوالات کیے جائیں گے اس کا جواب دوں گا۔‘انھوں نے کہا کہ اس اجلاس میں کسی کی تقرری کا موضوع زیرِ بحث نہیں آیا اور اس سلسلے میں میڈیا پر چلنے والی خبروں میں صداقت نہیں ہے۔اس موقع پر فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ ’ہمارے کل ارکان کی تعداد 144 بنتی ہے، اور اتحادی جماعتوں کو ملا کر ہمارے پاس 174 کا ہندسہ ملتا ہے۔ اس کے علاوہ چار آزاد امیدوار ہیں، اس طرح ہمارے پاس 180 سے 182 ارکان موجود ہیں۔ جب کہ سادہ اکثریت کے لیے 172 ارکان درکار ہیں۔‘خیال رہے کہ تحریک انصاف کا قومی اسمبلی میں متحدہ قومی موومنٹ پاکستان، گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس، بلوچستان عوامی پارٹی اور مسلم لیگ ق کے ساتھ اتحاد طے پا گیا ہے۔

فیس بک کمینٹ

متعلقہ تحریریں

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker