اختصارئےشیخ خالد زاہدلکھاری

پاکستان : خواب سے تعبیر تک ۔۔ شیخ خالد زاہد

ہم پاکستانی بجلی، پانی، گیس اور سب سے بڑھ کر بھوک جیسے گمبھیر مسائل کے جال میں بری طرح سے جکڑے ہوئے ہیں اور پھنستے ہی جارہے ہیں۔ ہر گزرتا دن اس جال کی سختی بڑھاتا جارہا ہے اور آنے والے دن کی مشقت میں اضافہ کر رہا ہے، ہر دن نئی سے نئی دشواری لاتا ہے۔ زیادہ تر خوابوں کا تعلق بند آنکھوں سے ہوتا ہے چاہے خواب میں محبوب آئے یا پھر کوئی ڈراؤنی شکل، خوابوں کو کھلی آنکھ سے بھی دیکھا جا سکتا ہے۔ خواب کی دونوں قسموں کا تعلق ہمارے ذہن میں پکنے یا بسنے والے خیالات ہیں۔ دونوں ہی طرح کے خوابوں کیلئے مدت سے ماحول سازگار نہیں۔ آج ہر طرف ایک نفسا نفسی ہے ہر کوئی بھاگے جا رہا ہے اور اسکا یہ بھاگنا کسی بھی قسم کے مقصد سے عاری ہے سوائے اس کے کہ سب اپنے آپ کو ہلکان کئے جارہے ہیں۔ آج تمام امور بغیر کسی بھاگ دوڑ کے حل ہوتے جارہے ہیں۔ رہی سہی کسر سماجی میڈیا نے پوری کردی ہے۔ پہلے زمانوں میں زندگیاں سکون نامی شے سے کافی حد تک شناسا تھیں اور خوابوں کی دنیا آباد کرنے کیلئے سکون کا ہونا بہت حد تک ضروری ہے۔ نہ موبائل کا شور تھا انٹرنیٹ اور کمپیوٹر جیسی بلائیں ابھی معاشرے کو اپنے حصار میں نہیں لے سکی تھیں تو بہت حد تک معاشرے کو سکون میسر تھا۔ سوچ بچار کرنے کا بھی وقت میسر تھا اور اپنی سوچوں کو دوسروں تک منتقل کرنے کا بھی وقت تھا ادب لحاظ بھی تھا اور بڑے بوڑھوں کی باتوں میں دانائی بھی تھی۔ چائے اور پانی کے ایک ایک گلاس پر گھنٹوں کی بیٹھکیں ہوتی تھیں مگر اب تو جو کچھ ہے وہ سب کا سب انٹرنیٹ پر ہے بزگوں کی دانائی بھی، ان کی سوچیں بھی اور اقوالِ زریں بھی۔ جب خوابوں کے دیکھنے کا مقصد ہوا کرتا تھا اور در حقیقت آج ان خوابوں کی بدولت ہی دنیا کی ترقی کی منزلیں طے کی ہیں اور یہاں تک پہنچی ہے۔ مگر دنیا کو یہاں تک پہچانے والوں نے خواب دیکھنے والوں نے یقیناً ایسا بالکل نہیں چاہا ہوگا جیسا کہ ہوتا جا رہا ہے۔ ان کے خواب تو اپنی آنے والی نسلوں کیلئے تھے، ان کا مقصد تو اپنے سکون سے کہیں زیادہ سکون مہیا کرنا تھا مگر سب کچھ الٹا ہی ہوتا چلا گیا اور ہم اپنی اپنی منزلوں سے کہیں دور نکل گئے۔
جب خواب کھلی آنکھوں سے دیکھا جائے اور اسکی تعبیر کیلئے دن رات بھاگ دوڑ کی جائے یہاں تک کہ جان و مال کی قربانی سے بھی دریغ نا کیا جائے تو یقنناً ایسا خواب مسلمانوں کیلئے ایک الگ اور آزاد ریاست کا مطالبہ ہی ہو سکتا ہے اور اس متبرک خواب کی تعبیر پاکستان کی صورت میں ہے۔ انسان اگر خوابوں کی تاریخ مرتب کرے گا تو حکیم الامت ڈاکٹر علامہ محمد اقبال کا خواب اسے اول درجے کے خوابوں میں رکھنا پڑے گا۔ ڈاکٹر اقبال نے مسلمانوں کی ایک الگ ریاست کا جو خواب کھلی آنکھوں سے دیکھا اور اپنے پیروکاروں کو، امت کے معماروں کو 23 مارچ 1940 کو بتایا، اس خواب کی اہمیت نے اس دن کو تاریخ ساز دن بنا دیا ہم پاکستانی رہتی دنیا تک اس دن کی یاد مناتے رہیں گے اور ہر پاکستانی اپنے آپ سے یہ عہد کرتا رہے گا کہ وہ پاکستان کی سلامتی اور بقاء کیلئے تعبیر والے خواب دیکھتا رہے گا۔ تاریخ گواہ ہے کہ “دو قومی نظریہ” کی بنیاد سر سید احمد خان نے رکھی تھی ان پر یہ بات واضح ہوچکی تھی کہ اب ہمیں ہندوستان میں ہندوؤں کے ساتھ نہیں رہنے دیا جائے گا۔ اس بات کو آج دلائل سے واضح کر دیا گیا ہے۔ سر سید احمد خان کے دو قومی نظریہ کو قائدِ اعظم نے پیش کیا اور اس کی بنیاد پر علامہ اقبال نے خواب دیکھا اس خواب کی تعبیر کیلئے لاکھوں انسانوں نے اپنے جان و مال کی قربانی دی اور “پاکستان” کے وجود کو جنم دیا۔ ہم پاکستانیوں کی زندگیوں سے سکون ختم کر دیا گیا ہے، سکون ہی وہ چیز تھی جس کی بدولت خواب دیکھے جا سکتے تھے۔ ہم نے خواب دیکھنے چھوڑ دئیے ہیں یا پھر ہم کسی اور راستے پر چل پڑے ہیں وہ راستہ جو ہمیں اغیار نے دکھایا ہے۔ ہم نے خواب دیکھنے چھوڑ دئے ہیں بلکہ ہم نے اقبال کے خواب کو بھی بھلادیا ہے، ہمیں ایک سوال اپنے آپ سے کرنا چاہئے کہ ہم نے اپنی آنے والی نسلوں کو یہ بات کتنی بار بتائی ہے کہ ہم “یومِ پاکستان” کیوں مناتے ہیں یا پاکستان کی تاریخ میں اس دن کی کیا اہمیت ہے۔ رہی سہی کثر ہمارے تعلیمی نظام نے پوری کردی ہے جنہوں نے ہماری کتابوں سے وہ اسباق بھی متروک کروادئیے ہیں جن کی بدولت یہ پیغام آگے بڑھ رہا تھا۔ ہمیں اپنی آنے والی نسلوں کیلئے اب اس بے ہنگم ماحول میں ہی خواب دیکھنے ہونگے روشن و پاک پاکستان، قائداعظم کے فرمودات کا پاکستان، اقبال کہ شاہینوں کہ پاکستان کے خواب۔ ان خوابوں کی پرورش کرنی ہوگی اپنی آنے والی نسلوں کیلئے، انکی تعبیر کیلئے ہمیں کسی بھی حد سے گزرنا پڑے تو گزر جائیں گے۔ ہم آج اس عہد ساز دن اپنے آپ سے اور اپنی آنے والی نسلوں سے یہ وعدہ کرتے ہیں کہ ہم خواب دیکھیں گے اور تعبیر کیلئے تن من اور دھن لگا کر کام کرینگے اور دنیا کو اپنے زندہ قوم ہونے کا پیغام دینگے۔

فیس بک کمینٹ

متعلقہ تحریریں

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker