عمران عثمانیکھیللکھاری

1890 کے بعد جنگ کے سال کے علاوہ پہلی مرتبہ کاؤنٹی سیزن ختم ۔۔ کرکٹ تجزیہ نگار عمران عثمانی کی بریکنگ

کورونا وائرس نے 2020کا کائونٹی سیزن لپیٹ دیا، 1890 کے بعد جنگ کے سال کے علاوہ یہ پہلا موقع ہوگا جب انگلش کرکٹ سیزن میں کائونٹی میچز نہیں ہوسکیں گے. بورڈ حکام پہلے ہی 28 جون تک مقابلے موخر کرچکے ہیں.
انگلینڈ کرکٹ بورڈ اور کائونٹی حکام حالات کی بہتری کی صورت میں بھی کائونٹی کا فرسٹ کلاس کرکٹ سیزن 2020 اسکریپ کرنے کا اصولی فیصلہ کرچکے ہیں لیکن سراسیمگی اور کرکٹرز میں مایوسی پھیلنے کے سبب اسے ابھی چھپایا جارہا ہے. باقاعدہ اعلان جون کے آخر میں متوقع ہے.
انگلینڈ کرکٹ بورڈ و کائونٹیز حکام کی ترجیحات میں 2 ایونٹس پر اتفاق ہوگیا ہے. کورونا سے تھوڑے بھی ریلیف کی صورت میں پہلی ترجیح انٹرنیشنل کرکٹ اور ٹی 20 بلاسٹ ایونٹ ہوگا. 100 ایونٹ بھی اگلے سال تک موخر ہوگا .اگر حالات نے اجازت نہ دی تو ٹی 20 بلاسٹ بھی ختم کردیا جائے گا صرف انٹرنیشنل کرکٹ کو یقینی بنایا جائے گا اس کے لئے خالی میدان بھی قابل قبول ہونگے. یہ بھی اس لئے ہوگا کہ براڈ کاسٹنگ کے معاہدے کسی شکل میں پورے ہوں اور اس سے آمدنی ممکن بنائی جائے جبکہ بقیہ ایونٹس کی منسوخی سے براڈ کاسٹرز کو اگلے سالوں میں ریلیف دیا جائےگا.
اس سال ویسٹ انڈیز اور پاکستان نے ٹیسٹ سیریز کھیلنی ہے. پھر پاکستان کے ساتھ ساتھ آسٹریلیا نے بھی انگلینڈ سے محدود اوورز کے متعدد میچز کھیلنے ہیں. ای سی بی پہلے ہی بتاچکا ہے کہ پورا سیزن نہ ہونے پر 300ملین پائونڈز کا خسارہ ہوگا جبکہ اس صورت میں خسارہ خاصا کم ہوجائے گا. کائونٹیز کے لیئے پہلے ہی 61 ملین پائونڈز منظور کئے جاچکے گویا فرسٹ کلاس کرکٹ نہ ہو نے سے کائونٹیز و کرکٹرز کو زیادہ مالی پریشانی نہیں ہوگی.
انگلینڈ کرکٹ ٹیم اس موسم گرما میں 2 ٹیموں میں تقسیم ہوجائے گی.کورونا کے سبب سیزن پہلے ہی موخر ہوچکا ہے. حالات نے اگر اگست تک بھی کھیلنے کی اجازت دی تو میزبان ٹیم 2 حصوں میں بٹ کر ایک ہی وقت میں مختلف ممالک کیخلاف اپنے ہی میدان میں ایکشن میں ہوگی .روٹ الیون ٹیسٹ اور مورگن الیون محدود اوورز کی کرکٹ کھیلیں گی.
ای سی بی کے اس فیصلے پر ورلڈ کپ ونر کپتان اوئن مورگن نے خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہم اس کےلئے تیار ہیں. تمام پلیئرز اسکے لئے تیار ہیں. مورگن یہ خواہش سمجھی جاسکتی ہے کہ بورڈ نے انکے انکار پر ماہانہ معاوضے میں کٹوتی نہیں کی ہے.
دوسری جانب انگلینڈ بورڈ ہر حال میں موقع ملتے ہی کسی نہ کسی طرح کچھ مقابلے کروائے گا اسکی پریشانی کس اندازہ اس امر سے لگایا جاسکتا ہے کہ پورا سیزن کورونا کی نذر ہونے پر اسے 300 ملین پائونڈز کا بڑا خسارہ ہوگا.

فیس بک کمینٹ
Tags

متعلقہ تحریریں

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker