شاعریلکھاری

غزل : سزائیں خوب ملتی ہیں ۔۔ زریں منور

غزل : سزائیں خوب ملتی ہیں ۔۔ زریں منور

یہاں پر دل لگانے کی سزائیں خوب ملتی ہیں
محبت کرنے والوں کو جفائیں خوب ملتی ہیں

کسی ٹُوٹے ہوئے دل پر ذرا سا پیار کا مرہم
اگر بھُولے سے بھی رکھ دیں دعائیں خوب ملتی ہیں

نجانے موسموں کو اُن سے کیا بغض و عداوت ہے
بِنا مانگے جنہیں غم کی گھٹائیں خوب ملتی ہیں

تمہاری یاد کے جلتے چراغوں کو شبِ غم میں
زمانے بھر کی طوفانی ہوائیں خوب ملتی ہیں

زبانَِ بے بیانی ترجمانَِ رنج وغم جب ہو
پسَِ دیوار بھی اکثر صدائیں خوب ملتی ہیں

لبادہ چاک ہو غنچوں کا یا پت جھڑ کا منظر ہو
ہمیں تو چار سُو تیری ادائیں خوب ملتی ہیں

وہ جن کی آنکھ سے لپٹی ہو وسعت آسمانوں کی
انہیں اونچی اڑانوں کی فضائیں خوب ملتی ہیں

۔۔ زریں منور

فیس بک کمینٹ

متعلقہ تحریریں

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker