افسانےسائرہ راحیل خانلکھاری

اِذنِ رُخصت ( 2 ) ۔۔ سائرہ راحیل خان

اُس کے ہاتھ سے اپنا ہاتھ آزاد کراتے ہوئے ، میں اپنی انگلیوں سے اس کے بکھرے بال سنوارنے لگی ۔ جو میرا محبوب مشغلہ تھا۔ اور اس کا بھی۔ میں جب بھی ایسا کرتی، اُس کی آنکھوں میں خُمار بھر آتا اور وہ نیم وا آنکھوں سے مسکرا کر مجھے تکتا رہتا۔

“کب تک یونہی میرے بالوں کو اپنی نازک انگلیوں سے سہلاتی رہو گی؟”
اس نے آنکھیں بند کرکے سرور میں گُم ہوتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔
“میں عمر بھر تمہارا سر آغوش میں لیے یونہی بیٹھی اپنی انگلیوں سے تمہارے بالوں کو سہلا سکتی ہوں ”
یہ وہ جواب تھا جو اس کے سوال پر میرے دل نے دیا تھا۔ مگر حقیقت وہ تھی جو زباں نے بیان کی۔۔۔۔۔۔۔۔ “بس کچھ دیر اور”
“کیوں؟ کچھ دیر کیوں؟ کیا جانے کا ارادہ کر لیا ہے؟”
اس نے لاشعوری طور پر شاید میرا اِرادہ بھانپ لیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں اس بار خاموش رہی۔۔۔۔۔۔۔۔

“سُنو! کچھ کہنا تھا مجھے”
پچھلے چند لمحوں کی گہری سوچ و بچار کے بعد بمشکل یہ پہلا جملہ بول کر میں نے اپنی بات کا آغاز کیا۔۔۔۔۔
” چُپ رہ کر بھی تو کتنا کچھ کہہ جاتی ہو ۔ جب تم میرے پہلو میں بیٹھی رہتی ہو نا تب میں تمہاری سحرانگیز خاموشی سے دلکش لفظ اور نایاب احساسات چُن چُن کر جانے کتنی حسین نظمیں بُنتا رہتا ہوں،جنہیں تمہاری آنکھیں کسی مدھر گیت کی طرح دھیرے دھیرے میری سماعتوں میں گھولتی چلی جاتی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکے باوجود بھی بولنے کی ضرورت محسوس کرتی ہو تو بولو، کیا کہنا چاہتی ہو؟”
اس نے اپنی بند آنکھیں لمحہ بھر کو کھولیں، اور لبوں پر مسکراہٹ سجاتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔ وہ سچ کہہ رہا تھا، میری موجودگی میں عموماً وہ خوبصورت نظمیں فی البدیہہ کہہ جایا کرتا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سُنو!
“میں تُم سے اب اجازت چاہتی ہوں”
اس بار میں نے اپنی آنکھیں مییچ لیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“تو جاؤ نا، کونسا پہلی بار جا رہی ہو، جانتا ہوں کے پھر سے لوٹ آؤ گی میرے پاس۔۔۔۔۔ ”
اس نے ایک بار پھر میرا ہاتھ اپنے ہاتھ میں لیا اور چومتے ہوئے نہایت اطمنان سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“نہیں! اب کی بار نہیں آؤں گی ”
میری بند آنکھوں سے اک آنسو آزاد ہوکر اسکی پیشانی پر جا ٹپکا،
“کیا مطلب نہیں آؤگی”؟
اس نے یکدم اپنی آنکھیں کھولیں اور یوں بے چین ہوتے ہوئے اٹھ بیٹھا کہ گویا وہ آنسو اس کی پیشانی کو نہیں بلکہ دل کو بھگو گیا ہو۔۔۔۔۔۔۔
“سچ کہہ رہی ہوں میں، مجھے اب واقعی اجازت چاہئے تم سے”
“اجازت کیسی؟ تم تو حکم سُنا رہی ہو”
میری آنکھوں کی نمی اسکی نگاہوں کا تعاقب کر چکی تھیں ۔ اب کی بار کہرا سامنے والے کی آنکھوں میں چھایا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“حکم کیسا؟ میں تو تمہاری غلام ہوں ، جو گر تم حکم کرو تو عمر بھر تمہارے قدموں میں بیٹھی رہوں ، مگر افسوس کے نا یہ عمر میرے اختیار میں ہے نا ہی تمہارے قدم، اس عمر میں تو فقط ہماری مُلاقات طے پائی تھی جو ہو چُکی، وصل کے لیے تو ایک اور عمر درکار ہے . اور ان دو عمروں کے بیچ کا سفر ہم دونوں کو جُدا جُدا ہی طے کرنا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آنسووں کی ہکلی پھوار گھنی برسات میں تبدیل ہونے لگی۔۔۔۔۔۔۔۔
مت بناو باتیں، جب جی میں آتا ہے زندگی بخش دیتی ہو اور جب چاہتی ہو یادوں کے بیابان میں جھلسنے کے لیے تنہا چھوڑ جاتی ہو۔
اس نے خفگی سے منہ پھیرتے ہوئے کہا۔۔ ۔۔۔
“خفا مت ہو، کیا خبر ہمیشہ کی طرح اس بار بھی لوٹ آوں”،،،،،
میں نے امکان ظاہر کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اور اگر نا آئیں تو؟”
اُس نے منہ بسورتے ہوئے اندیشہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔

فیس بک کمینٹ

متعلقہ تحریریں

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker