فیضان عارفکالملکھاری

فیضان عارف کاکالم:ڈنمارک ، ہالینڈ اور ضیاء الحق کی سائیکل

میں اس وقت نویں جماعت میں پڑھتا تھا جب مجھے والد صاحب نے نئی سائیکل لے کر دی۔ مجھے اچھی طرح یاد ہے کہ نئی سائیکل ملنے کی خوشی نے مجھے کئی ہفتے بلکہ کئی مہینے سرشار رکھا۔ یہ محض ایک سائیکل نہیں تھی بلکہ گھومنے پھرنے کی آزادی اور آوارگی کا ایک وسیلہ تھی۔ یہ وہ زمانہ تھا جب کسی طالب علم کے پاس کیلکولیٹر یا سائیکل کا ہونا بڑی بات سمجھی جاتی تھی۔ اس وقت پاکستان میں جگہ جگہ سائیکلوں کی مرمت، پنکچر لگانے اور کرائے پر سائیکل حاصل کرنے کی دکانیں ہوا کرتی تھیں۔موٹر سائیکل سواری کا رواج بھی عام ہو رہا تھا مگر موٹر سائیکل کی خریداری ہر ایک کے بس کی بات نہیں تھی۔ سکولوں، کالجوں کے بہت سے اساتذہ اور دفتروں میں کام کرنے والے بیشتر لوگ سائیکل پر آیا جایا کرتے تھے۔ سائیکل سواری اور سادگی لازم وملزوم تھی لیکن پھر رفتہ رفتہ سادگی کے ساتھ ساتھ ہمارے معاشرے سے سائیکل سواری بھی متروک ہوتی چلی گئی اور سائیکل کو غریبوں اور مجبوروں کی سواری سمجھا جانے لگا۔ زندگی کی تیز رفتاری نے سائیکل سواروں کو بہت پیچھے چھوڑ دیا۔ لندن آنے کے دو برس بعد مجھے ڈنمارک کے دارالحکومت کوپن ہیگن جانے کا موقع ملا تو میں وہاں سائیکل سواروں کی بہتات دیکھ کر حیران رہ گیا۔ ہر سڑک کے دونوں طرف سائیکل سواروں کے لئے خصوصی ٹریک بنے ہوئے تھے جہاں نہ تو کوئی پیدل چل سکتا تھااور نہ ہی کوئی موٹر سائیکل سوار داخل ہو سکتا تھا۔ ان سائیکل ٹریکس پر عورتیں، مرد، بوڑھے اور بچے اپنی اپنی سائیکلوں پر رواں دواں نظر آ رہے تھے۔ خواتین نے اپنی سائیکلوں کے آگے خصوصی ٹوکریاں لگوا رکھی تھیں جن میں وہ اپنے چھوٹے بچوں کو بٹھا کر بیلٹ سے باندھ دیتیں (جس طرح ہوائی جہاز میں مسافر کو بیلٹ باندھی جاتی ہے) اس طرح بچے بھی سائیکل سواری سے لطف اندوز ہوتے رہتے اور مائیں بھی ان کو بہلاتی اور مختلف مناظر کے بارے میں بتاتی بھی رہتیں۔ ڈنمارک میں ہر سائیکل سوار ٹریفک کے ضابطوں کی سختی سے پابندی کرتا ہے۔ ٹریفک لائٹ پر رکنے، سر پر چھوٹا ہیلمٹ پہننے اور سیفٹی کا خیال رکھنے کو ہر سائیکل سوار اپنی ذمہ داری سمجھتا ہے۔ خریداری کے لئے سائیکل سواروں نے اپنی سائیکلوں کے آگے یا پیچھے بھی ٹوکریاں لگوا رکھی ہوتی ہیں۔ ڈنمارک میں 56فیصد لوگ سائیکل استعمال کرتے ہیں جن میں سے 30فیصد لوگ ہر روز اپنے کام پر آنے اور خریداری کے لئے سائیکل سواری کرتے ہیں جن میں ڈاکٹرز، انجینئرز، پروفیسرز، افسران، تاجر، طالب علم، سیاستدان، وکیل، جج یعنی ہر شعبہ ہائے زندگی کے لوگ شامل ہیں اور دلچسپ بات یہ ہے کہ یہاں کے لوگ سائیکل سواری کے معاملے میں کسی قسم کے احساس کمتری میں مبتلا نہیں ہیں۔ برفباری اور موسلا دھار بارش میں بھی یہ لوگ سائیکل سواری جاری رکھتے ہیں۔
دراصل وہ اس حقیقت سے بخوبی واقف ہیں کہ سائیکل سواری صحت کے لئے مفید اور ماحولیاتی آلودگی میں مزید اضافے کو روکنے کا اہم ذریعہ ہے۔ ویسے تو میں مشاعروں میں شرکت اور دوستوں اقبال اختر، فواد کرامت، صفدر علی آغا، کامران اقبال اعظم اور ابو طالب سے ملنے بارہا کوپن ہیگن گیا ہوں لیکن چند برس پہلے جب اقوام متحدہ نے ڈنمارک کے لوگوں کو دنیا میں سب سے زیادہ خوش رہنے والی قوم قرار دیا تو میں اور میرے سالیسٹر دوست نسیم احمد ایک بار پھر ڈنمارک گئے اور مختلف شہروں میں گھومتے پھرتے رہے تاکہ اندازہ کر سکیں کہ دنیا میں سب سے زیادہ خوش رہنے والی قوم کی خوشی کے اسباب کیا ہیں؟ چار روز کی سیاحت اور مقامی لوگوں سے ملنے کے بعد ہم اس نتیجے پر پہنچے کہ ڈینش قوم کے سب سے زیادہ خوش رہنے کی وجوہات میں سادگی، کسی کی ٹوہ میں نہ رہنا، بے فکری، سائیکل سواری اور نفسیاتی مسائل سے ہر ممکن حد تک آزاد رہ کر زندگی گزارنا ہے۔ سائیکل سواری اب ڈنمارک کے لوگوں کی سماجی زندگی کا اہم حصہ بن چکی ہے۔ پورے ملک میں شاپنگ سنٹرز، دفتروں، ہسپتالوں، تفریحی مقامات، پارکوں، سکولوں، کالجوں اور یونیورسٹیز میں بڑے بڑے سائیکل اسٹینڈز پر سینکڑوں کی تعداد میں دوپہیوں والی اس سواری کو کھڑے دیکھ کر مجھے پاکستان کے سینما گھروں کے سائیکل اسٹینڈز بھی یاد آئے جب ایک زمانے میں سینکڑوں لوگ سائیکل پر فلم دیکھنے آتے تھے اور فلم ختم ہونے پر سائیکل اسٹینڈ پر فلم بینوں کا جم غفیر دکھائی دیتا تھا۔
پاکستان میں آلودگی اور موٹاپے میں جس تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے اس کے سدباب کے لئے ضروری ہے کہ عام لوگ موٹر سائیکل کی بجائے سائیکل سواری کی عادت اپنائیں جس سے ان کے اخراجات میں کمی اور صحت میں بہتری آئے گی۔پورے یورپ میں سائیکل ایک مقبول سواری ہے۔ اس معاملے میں ہالینڈ کے لوگ پہلے نمبر پر ہیں جہاں 71فیصد لوگ سائیکل سواری کرتے ہیں اور ان میں سے 43فیصد لوگ ایسے ہیں جو ہر روز سائیکل چلاتے اور اپنے روزمرہ کے امور نمٹاتے ہیں۔ اس دو پہیوں والی سواری کی ایجاد اور ارتقاء کی کہانی بھی بڑی دلچسپ ہے۔
پہلی سائیکل 1817ء میں ایک جرمن مکینک نے ایجاد کی جس کا تعلق مین ہائم سے تھا۔ یہ سائیکل پیڈلز کے بغیر تھی اور اس کا فریم لکڑی کا تھا اور اسے پہلی بار 1818ء میں فرانس کے شہر پیرس میں نمائش کے لئے پیش کیا گیا۔ 1860ء میں پیڈل والی سائیکل بنائی گئی اور 1886ء تک سائیکل نے ارتقائی مراحل طے کر کے موجودہ شکل اختیار کی اور اب پرتگال یورپ کے اندر سائیکل سازی میں پہلے نمبر پر ہے جبکہ اٹلی کا نمبر دوسرا ہے جہاں بالترتیب 27لاکھ اور 21لاکھ سائیکلیں ہر سال تیار کی جاتی ہیں۔ یورپ کے دیگر ملکوں کے دارالحکومتوں کی طرح لندن اور خاص طور پر سنٹرل لندن میں موٹر گاڑیوں کے رش اور ماحولیاتی آلودگی کو کم کرنے کے لئے نئے نئے قوانین بنائے جا رہے ہیں۔ سڑکوں کی چوڑائی کو کم کر کے سائیکل لین یا سائیکل ٹریکس بنا لئے گئے ہیں۔ کرائے پر سائیکل حاصل کرنے کے لئے جگہ جگہ اسٹینڈز بنا دیئے گئے ہیں۔ گذشتہ چند برسوں کے دوران سنٹرل لندن میں کاروں کی آمد و رفت کی تعداد میں نمایاں کمی اور سائیکل سواری کے رجحان میں واضح اضافہ ہوا ہے۔ وسطی لندن میں بڑے بڑے برطانوی سیاستدانوں سمیت بہت سے نامور لوگ بھی سائیکل سواری کرتے دکھائی دیتے ہیں۔ اگرچہ کار چلانے والوں کو جگہ جگہ سائیکل لین اور سائیکل سواروں کی وجہ سے بڑی الجھن کا سامنا کرنا پڑتا ہے مگر جہاں بات ماحولیاتی آلودگی کی آ جائے تو وہاں سائیکل چلانے والوں کی سہولت کو اولیت دی جاتی ہے۔ یورپ بھر میں جیسے جیسے ماحولیات کے بارے میں آگاہی میں اضافہ ہو رہا ہے ویسے ویسے سائیکل سواری کا رجحان بھی بڑھ رہا ہے۔ایک وقت تھا کہ لوگ پاکستان میں سائیکل کو جنٹلمین کی سواری سمجھتے تھے اور سوار اپنی سواری کا بہت خیال رکھتے تھے۔ خاص طور پر پنجاب میں کام کرنے والے پشتون بھائی اپنی سائیکل کو بہت سجاتے اور اس کی حفاظت کرتے تھے۔ میلوں ٹھیلوں اور سرکس کے موقع پر کئی لوگ پورا ہفتہ مسلسل ایک بڑے دائرے میں سائیکل چلانے کا ریکارڈ قائم کرتے، غروب آفتاب کے بعد چلتی ہوئی سائیکل پر مختلف کرتب دکھاکر نوٹوں کی شکل میں داد پاتے اور جس روز انہوں نے مسلسل سائیکل چلانے کا اختتام کرنا ہوتا اس دن مقامی لوگوں کا ہجوم انہیں دیکھنے آتا اور ان کے فن کو سراہتا۔ معلوم نہیں اب بھی یہ سائیکل سوار ہیروز اپنے فن کا مظاہرہ کرتے ہیں یا دیگر ہنرمندوں کی طرح ماضی کی دھول میں گم ہو گئے ہیں۔ پاکستان میں جب تک کوئی چیز فیشن نہ بن جائے اسے مقبولیت حاصل نہیں ہوتی۔ اچھی بات یہ ہے کہ کھانا پکانے کے ہنر کی طرح اب سائیکل سواری کو بھی فیشن سمجھا جانے لگا ہے۔ لوگ اب امپورٹڈ سائیکل کی سواری کو فیشن کے طور پر اپنا رہے ہیں۔
ایک زمانے میں جنرل ضیاء الحق نے سائیکل سواری کو رواج دینے کے لئے گھر سے دفتر جاتے ہوئے سائیکل سواری کی تصاویر اخبارات میں شائع کروائیں لیکن بدقسمتی سے لوگوں کی اکثریت نے ان کی پیروی کرنے کی بجائے پیدل چلنے کو ترجیح دی اور پاکستانی قوم گیارہ برس کے لئے کئی معاملات میں پیدل ہو گئی اور پھر الیکشن کمیشن آف پاکستان نے سائیکل کو انتخابی نشانات کی فہرست میں شامل کر لیا اور اب ہمارے سیاستدان سائیکل کو صرف انتخابی نشان کے طور پر ہی استعمال میں لاتے ہیں۔برطانیہ میں آج بھی بڑے ہونے والے بچوں کو تحفے میں سائیکل دی جاتی ہے اور وہ سائیکل سواری سے خوب لطف اندوز بھی ہوتے ہیں۔ برطانوی وزیر اعظم بورس جانسن سمیت پارلیمنٹ کے بہت سے اراکین اور مختلف کونسلوں کے میئرز، پروفیسرز اور ڈاکٹرز سائیکل سواری کے شوقین ہیں۔پاکستان میں ہمارے سیاستدان اور ارباب اختیار سائیکل چلانا تو کجا سائیکل کی سواری کرنے والوں سے ملنا تک گوارا نہیں کرتے۔ برطانیہ میں سائیکل چلانے والے ملک چلا رہے ہیں جبکہ پاکستان میں ملک چلانے والوں کو سائیکل تک ڈھنگ سے چلانا نہیں آتی۔ ایک صاحب نے پاکستانی پارلیمنٹ کے سامنے اپنی سائیکل کھڑی کی تو پولیس والے نے کہا کہ یہاں اپنی سائیکل مت کھڑی کرو۔یہاں سے وزیر اور پارلیمنٹ کے ارکان گزرتے ہیں۔ وہ صاحب بولے فکر کی کوئی بات نہیں میں نے اپنی سائیکل کو تالا لگا دیا ہے۔ ہمارے سیاستدانوں نے ملک میں امن و امان کے حالات کو اس نہج تک پہنچا دیا ہے کہ غریب کے علاوہ کوئی اور یہاں سائیکل سواری کا متحمل نہیں ہو سکتا۔ کیا آپ تصور کر سکتے ہیں کہ اسلام آباد، کراچی، لاہور یا کسی اور بڑے شہر میں ہمارے ملک کا کوئی وزیر یا رکن پارلیمنٹ بغیر سیکورٹی کے سائیکل سواری کر سکتا ہے؟ میں نے پہلے بھی اپنے ملک کے سیاستدانوں کے بارے میں لکھا تھا کہ ان کی مثال چچا چھکن کی اس سائیکل کی طرح ہے جس کی گھنٹی کے علاوہ سب کچھ بجتا ہے۔

فیس بک کمینٹ
Tags

متعلقہ تحریریں

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker