اہم خبریں

گوگل نے نامور گلو کارہ اقبال بانو کی تاریخ پیدائش کے بارے میں ابہام پیدا کر دیا

ملتان : گوگل نے 28دسمبر کو نامور گلو کارہ اقبال بانو کا جنم دن قرار دیا ہے اور گوگل ڈوڈل کو ان سے منسوب کرتے ہوئے اسے اقبال بانو کی 81ویں سالگرہ قرار دیا ہے ۔دوسری جانب وکی پیڈیا اوردیگرذرائع کے مطابق اقبال بانو کا جنم دن 27اگست اور پیدائش کا سال 1938کی بجائے 1935ہے جبکہ پاکستان کرانیکل میں ان کی تاریخ پیدائش 1927درج ہے ۔
ماضی میں بھی گوگل پاکستان کی نمایاں شخصیات جن میں نصرت فتح علی خان، عبد الستار ایدھی، نور جہاں، وحید مراد، نازیہ حسن، فاطمہ سریہ بجیا اور دیگر معروف شخصیات کو خراج تحسین پیش کرتا رہا ہے۔
نامور محقق عقیل عباس جعفری نے اے پی پی سے بات چیت کر تے ہوئے کہا کہ ماضی کی شخصیات کی تواریخ پیدائش کے بارے میں بسا اوقات ابہام پیدا ہو جاتا ہے ۔ ایک تو اس زمانے میں پیدائش کی تاریخ کو اہمیت نہیں دی جاتی تھی دوسرا کاغذات میں بھی کوئی اور تاریخ درج کر ا دی جاتی تھی ۔ انہوں نے کہا کہ اقبال بانو کی تاریخ پیدائش جو بھی ہو گوگل کی جانب سے ان کی خدمات کا اعتراف غیر معمولی بات ہے ۔
اقبال بانو دہلی میں پیدا ہوئیں اور انہوں نے اپنے فنی سفرکا آغازبھی آل انڈیا ریڈیو سے کیاتاہم قیام پاکستان کے بعد وہ ملتان میں آ کرآباد ہوئیں ۔ملتان میں اس زمانے میں ریڈیو اسٹیشن قائم نہیں ہو ا تھا۔ اقبال بانو کواپنا فنی سفر جاری رکھنے کے لئے لاہور منتقل ہونا پڑا اور انہوں نے ریڈیو پاکستان لاہور اورفلمی صنعت کے ساتھ وابستگی اختیار کی ۔ قتیل شفائی کے گیت”تو لاکھ چلے ری گوری “ سے ان کے شہرت کا سفر شروع ہوا جو 1985 میں اس وقت عروج پر پہنچ گیا جب انہوں نے فیض امن میلے میں ”ہم دیکھیں گے “گاکر گویا میلہ لوٹ لیا ۔ انہوں نے ملتان ریڈیو سے بھی بہت سی غزلیں گائیں ۔ 21اپریل 2009 کو وہ لاہور میں انتقال کر گئیں ۔
ریڈیو پاکستان ملتان کے اسٹیشن ڈائریکٹر آصف خان کھیتران نے کہا کہ بلا شبہ وہ ایک عظیم گلو کارہ تھیں اور ریڈیو ملتان کے لئے یہ اعزاز کی بات ہے کہ انہوں نے یہاں بہت سے گیت ریکارڈ کروائے ۔

فیس بک کمینٹ
Tags

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker